ٹیپو سلطان کا سفر آخرت

وہ عالمِ تصور میں میسور کے شیر کو ایک خوفناک دھاڑ کے ساتھ اپنے پرحملہ آور ہوتا دیکھ کر چونک جاتا تھا‘ اسکی سپاہ سرنگا پٹم کے میدان میں جمع ہونے والے سپاہیان اسلام کی نعشوں میں میسور کے شیر کو تلاش کر رہے تھے

مسلمانوں کے ملک میں پرندے بھوک سے نا مر جائیں

زیر نظر تصویر ترکی کی ہے جہاں ایک بہت پرانی اسلامی روایت ابھی تک زندہ ہے کہ جب سردی کا عروج ہو اور پہاڑوں پر برف پڑ جائے تو یہ لوگ چوٹیوں پر چڑھ کر اس وقت تک دانہ پھیلاتے رہتے ہیں جب تک برفباری ہوتی رہے۔ اور یہ اس لیئے ہے کہ پرندے اس موسم میں کہیں بھوک سے نا مر جائیں۔

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔

داستان ایک متکبر کی

سبحان الله ! یہ تھا اسلام کا انصاف

میں اپنا ثواب نہیں بیچوں گا

عموریہ کی جنگ میں پیش آنے والا ایک دلچسپ واقعہ

جون 20, 2010

تلاش از ممتاز مفتی



Forex trading

تلاش از ممتاز مفتی 
Talaash by 
Mumtaz Mufti
DOWNLOAD (Right click + Save link as)

Alternative links
LINK-1
LINK-2
LINK-3
Talash ( تلاش) is the last book of Mumtaz Mufti, in which he has discussed different Islamic topics.



اِس کتاب کو مت پڑھئے ۔۔۔ ہرگز مت پڑھئے !!!

یہ کتاب
یہ کتاب نہ فلسفہ بگھارتی ہے
نہ علمیت چھانٹتی ہے
نہ دانشوریاں پیش کرتی ہے۔
اگر آپ سنجیدہ اور مدلل مطالعہ کے خواہش مند ہیں تو میرا مخلصانہ مشورہ ہے کہ آپ یہ کتاب نہ پڑھیں۔ خواہ مخواہ وقت ضائع ہوگا۔
سچی بات یہ ہے کہ یہ کتاب ، کتاب ہی نہیں۔ میں نے بڑی کوشش کی ہے کہ یہ کتاب نہ بن جائے "بکش" نہ ہو جائے۔ بوجھل نہ ہو جائے۔ اونچی باتیں نہ کرے ، جو سر کے اوپر سے گزر جائیں۔

یہ کتاب آپ سے باتیں کرے گی۔ ہلکی پھلکی باتیں ، چھوٹے چھوٹے موضوعات پر باتیں ، ممکن ہے آپ کو اس کی کچھ باتوں سے اتفاق نہ ہو۔ ایسا ہو تو ازراہ کرم اس کی بات کو پلے نہ باندھیں۔ جھگڑا نہ کریں۔ صاحبو ! دلیل سے کبھی کوئی قائل نہیں ہوا۔ اختلاف رائے تو ہوتا ہی ہے۔ اسی سے زندگی رنگ بھری ہے۔

اس کتاب کا نام غلط ہے۔ غلط فہمیاں پیدا کرتا ہے۔ قاری کہے گا اگر "تلاش" ہے تو "منزل" بھی ہوگی۔ لیکن یہ ایسی تلاش ہے جس کی کوئی منزل نہیں۔ صرف تلاش ہی تلاش ہے۔ یہ بھی واضح نہیں ہے کہ کس چیز کی تلاش ہے؟
کبھی شک پڑتا ہے کہ "مسلمان" کی تلاش ہے۔ کبھی خیال آتا ہے کہ شاید دورِ حاضرہ کی حقیقت کی تلاش ہے۔ کبھی ایسے لگتا ہے کہ یہ تو سچ کی تلاش ہے۔ حتمی سچ کی نہیں بلکہ چھوٹی چھوٹی سچائیوں کی۔ سوچوں کی سچائیاں ، ایمان کی سچائیاں ، برتاؤوں کی سچائیاں ، رسمی سچائیاں ، پرانی سچائیاں ، نئی سچائیاں۔

کسی نے بوٹے سے پوچھا :
بوٹے ، بوٹے یہ بتا تُو اگنے میں اتنی دیر کیوں لگاتا ہے؟
بوٹا بولا : اس لیے کہ زمین کی کشش مجھے اگنے نہیں دیتی۔
ہائیں ایسا ہے؟ بری بات۔
بوٹا بولا : نہ نہ زمین کو برا نہ کہو۔
کیوں نہ کہیں ؟
اس لیے کہ اگر زمین مجھے اگنے سے نہ روکے تو میں کبھی نہ اُگ سکوں۔
وہ کیا بات ہوئی؟

رکاوٹ نہ ہو تو حرکت ممکن ہی نہیں !
یہ قانون فطرت ہے صاحبو۔
رکاوٹیں دراصل رحمتیں ہیں۔ رکاوٹیں حرکت پیدا کرتی ہیں۔ جن کے پہنچ جانے کا خطرہ ہو ان کے راستے میں رکاوٹیں آتی ہیں۔
بڑے رکاوٹیں نہ کھڑی کریں تو چھوٹوں میں احتجاج پیدا نہ ہو۔ Revolt نہ ہو۔ حرکت پیدا نہ ہو۔
اور حرکت نہ ہو تو زندگی نہ ہو۔ کچھ بھی نہ ہو۔
یہ دنیا تصویر کی طرح فریم میں ٹنگی رہے۔
یہ زندگی کیا ہے؟
قیام اور حرکت کا اک کھیل ہی تو ہے۔
کبھی قیام آ جاتا ہے اور آتے ہی حرکت پر دفعہ 144 لگا دیتا ہے۔
خبردار ! حرکت نہ کرنا ۔۔۔ حرکت گناہ ہے ۔۔۔ حرکت شیطانیت کا کھیل ہے !

پھر حرکت کا ریلا آتا ہے ، سب کچھ توڑ پھوڑ کر رکھ دیتا ہے۔




اقتباس : "تلاش" از ممتاز مفتی

Introduction

“TALASH” (search, to look for), is a book in which the author quest for the definition of a true and simple “Muslim”. He is startled to find out that despite of being born in a Muslim family and raised in a Muslim country, the meaning of his own identity is vague to him. The book convinces reader to discover his inner-self and expresses the liberal views of the author about the so-called Islamic scholars and their preaching to our younger generation. It also highlights the true spirit of Quranic teaching in our daily lives. BUT WAIT, this does not mean that Talash is a book full of lengthy mystic lectures rather it is free from rhetoric and is simple to understand.

The First point the author tries to accentuate is the rapport between Allah and human. He strongly criticizes the Illiterate and so-called Islamic scholars ( molvis or ulmay dein) as they are relentlessly depicting a negative and strict image of Allah-man relationship . They are molding the Islamic laws as per their wishes and benefits, due to which there always exists discrepancies in all Islamic issues. This is one of the most obvious reasons that are stopping our younger generation to develop their interest in understanding the real meaning of this balanced religion. Younger generation have clung to the belief that Allah is very strict and is ready to punish us for our every single misdeed. Where as in reality, this is most reliable and strong relationship then any other. He is with us in all the moments of grief as well as joy, he acts a friend and at same time as a mother, he is always listening to you and no matter what you do he always loves you all time and is always ready to forgive you . Instead of being of scared from him (as molvis tell us) it is better to respect him and in order to create a good relationship with Allah we need to take him with us in every single moment of our life.
Next point highlighted by author is that in order for Muslims to prosper it is of extremely important to follow the characteristics (actions) of our Prophet (S.A.W). He have presented some really good examples in the book. Now a days Muslims are taking Islam as a ritual or rather a source of identification. Following the characteristics (serat) of Prophet (P.B.U.H) is paramount way to create the harmony and balance in ones life.

Later the authors’ states that Talash (search) for knowing oneself doesn’t end here rather it is chronic process and one need to struggle for it through out the life. When one will struggle then one will search and this is the basic purpose of Islam. “To find, to discover the underlying secrets” and the only key to reveal these secretes is “HOLY QURAN”.



DOWNLOAD (Right click + Save link as)

Alternative links
LINK-1
LINK-2
LINK-3


home improvement loan

0 comments:

ایک تبصرہ شائع کریں