ٹیپو سلطان کا سفر آخرت

وہ عالمِ تصور میں میسور کے شیر کو ایک خوفناک دھاڑ کے ساتھ اپنے پرحملہ آور ہوتا دیکھ کر چونک جاتا تھا‘ اسکی سپاہ سرنگا پٹم کے میدان میں جمع ہونے والے سپاہیان اسلام کی نعشوں میں میسور کے شیر کو تلاش کر رہے تھے

مسلمانوں کے ملک میں پرندے بھوک سے نا مر جائیں

زیر نظر تصویر ترکی کی ہے جہاں ایک بہت پرانی اسلامی روایت ابھی تک زندہ ہے کہ جب سردی کا عروج ہو اور پہاڑوں پر برف پڑ جائے تو یہ لوگ چوٹیوں پر چڑھ کر اس وقت تک دانہ پھیلاتے رہتے ہیں جب تک برفباری ہوتی رہے۔ اور یہ اس لیئے ہے کہ پرندے اس موسم میں کہیں بھوک سے نا مر جائیں۔

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔

داستان ایک متکبر کی

سبحان الله ! یہ تھا اسلام کا انصاف

میں اپنا ثواب نہیں بیچوں گا

عموریہ کی جنگ میں پیش آنے والا ایک دلچسپ واقعہ

30 جون، 2011

Sunan Abi Dawood


Sunan Abi Dawood
Detail
Aouther
Imam Abu Dawood
Translator
Molana Abdul Hakeem
Publisher
-

Language
Arabic/Urdu
Volumes
3
Format
PDF
Volume
Volume 1
85.6 MB
Volume 2
81.8 MB
Volume 3 Part 1
46.6 MB
Volume 3 Part 2
48.0 MB

Sunan Abi Daawud (Arabic: سنن أبي داود‎) is one of the Sunni Six Major Hadith collections, collected by Abu Dawood.


religion and spirituality
home loan.
toll free numbers

Muwatta Imam Malik




Mouta Imam Malik 
Detail
AuthorImam Malik
TranslatorHafiz Zubair Ali Zai
PublisherMaktabah Islamia

Language
Arabic/Urdu
Volumes
1
Format
PDF
12.8 MB





Muwatta Imam Malik
Detail
AuthorImam Malik
Translator-
PublisherMaktabah Rahmania

Language
Arabic/Urdu
Volumes
1
Format
PDF

134.8 MB


The Muwaṭṭa (Arabic: الموطأ‎) is the first written collection of hadith comprising the subjects of Muslim law, compiled and edited by the Imam, Malik ibn Anas. Malik's best-known work, Al-Muwatta was the first legal work to incorporate and join hadith and fiqh together. The work was received with wide praise. Abu Bakr ibn al-`Arabi said: "The Muwatta’ is the first foundation and the core, while al-Bukhari’s book is the second foundation in this respect. Upon these two all the rest have built, such as Muslim and al-Tirmidhi."




It is considered to be from the earliest extant collections of hadith that form the basis of Islamic jurisprudence alongside the Qur'an. Nonetheless, is not merely a collection of hadith; many of the legal precepts it contains are based not on hadith at all. The book covers rituals, rites, customs, traditions, norms and laws of the time of the Islamic prophet Muhammad.
It is reported that Imam Malik selected only about 1% of authentic Ahadith for inclusion into the Muwatta, from the corpus of 100,000 narrations available to him. Thus, the book has been compiled with great diligence and meticulousness.


 






Forex trading
search engine optimization companies

sahi Muslim arabic/Urdu

Sahi Muslim
Detail
Author
Imam Muslim Bin Alhajaj
Translator
Allama Waheed u Zaman khan
PublisherKhalid Ehsan Publishers

Language
Arabic/Urdu
Volumes
6
Format
PDF
Volume
volume 1
79.2 MB
volume 2
74.6 MB
volume 3
68.7 MB
volume 4
59.7 MB
volume 5
80.6 MB
volume 6
92.0 MB


 Complete download all 6 volumes


free doamin yahoo. 


digital asset management
softwar 

Sahi Bukhari


Sahi ul Bukhari
Detail
Author
Abu Abdullah Muhammad Bin Ismail Bukhari
Translator
Molana Muhammad Dawood Raz
PublisherMarkazi Jamiat Ahlehadees Hind


Language
Arabic/Urdu
Volumes
8
Format
PDF

Volume
Volume 1
47.8 MB
Volume 2
43.3 MB
Volume 3
42.1 MB
Volume 4
46.8 MB
Volume 5
41.2 MB
Volume 6
41.0 MB
Volume 7
42.2 MB
Volume 8
38.6 MB 



Sahih al-Bukhari (Arabic: صحيح البخاري‎), as it is commonly referred to, is one of the six canonical hadith collections of Islam. These prophetic traditions, or hadith, were collected by the Persian Muslim scholar Muhammad ibn Ismail al-Bukhari, after being transmitted orally for generations. Sunni Muslims view this as one of the three most trusted collections of hadith along with Sahih Muslim and al-Muwatta. In some circles, it is considered the most authentic book after the Qur'an. The Arabic word sahih translates as authentic or correct

Reconstruction Of Religious thoughts of Islam By Dr Allama Iqbal




Reconstruction Of Religious thoughts of Islam 
By
Dr Allama Iqbal

DOWNLOAD
Introduction:



The Reconstruction of Religious Thought in Islam is a compilation of lectures delivered by Muhammad Iqbal on Islamic philosophy; it was published in 1930. These lectures were delivered by Iqbal in Madras, Hyderabad, and Aligarh. The last chapter, "Is Religion Possible", was added to the book from the 1934 Oxford Edition onwards.

_________________________________________________________________________________

What is the character and general structure of the universe in which we live? Is there a permanent element in the constitution of this universe? How are we related to it? What place do we occupy in it, and what is the kind of conduct that befits the place we occupy? These questions are common to religion, philosophy, and higher poetry.

The teaching of the Qur'an that life is a process of progressive creation necessitates that each generation, guided but unhampered by the work of its predecessors, should be permitted to solve its own problems.

since God is the ultimate spiritual basis of all life, loyalty to God virtually amounts to man's loyalty to his own ideal nature. The ultimate  spiritual basis of all life, as conceived by Islam, is eternal and reveals itself in variety and change. A society based on such a  conception of Reality must reconcile, in its life, the categories of permanence and change. It must possess eternal principles to regulate its collective life, for the eternal gives us a foothold in the world of perpetual  change. But eternal principles when they are understood to exclude all possibilities of change which, according to the Qur'ān, is one of the greatest `signs' of God, tend to immobilize what is essentially mobile in its nature. The failure of the Europe in political and social sciences illustrates the former principle, the immobility of Islam during the last five hundred years illustrates the latter.
What then is the principle of movement in the structure of Islam? This is known as Ijtihād.

The teaching of the Qur'ān that life is a process of progressive creation necessitates that each generation, guided but unhampered  by the work of its predecessors, should be permitted to solve its own problems.

Thus, in the evaluation of religion, philosophy must recognize the central  position of religion and has no other alternative but to admit it as something focal in the process of reflective synthesis. Nor is there any reason to suppose that thought and intuition are essentially opposed to each other. They spring up from the same root and complement each other. The one grasps Reality piecemeal, the other grasps it in its wholeness. The one fixes its gaze on the eternal, the other on the temporal aspect of Reality. The one is present enjoyment of the whole of Reality; the other aims at traversing the whole by slowly specifying and closing up the various regions of the whole for exclusive observation. Both are in need of each other for mutual rejuvenation. Both seek visions of the same Reality which reveals itself to them in accordance with their function in life.



Some Quotes from the book

  • ...To have a succession of identical thoughts and feelings is to have no thoughts and feelings at all. Such is the lot of most Muslim countries today. They are mechanically repeating old values...
  • ...space, time, and matter are interpretations which thought puts on the free creative energy of God.
  • If the aim of religion is the spiritualisation of the heart, then it must penetrate the soul of man, and it can best penetrate the inner man . . . We find that when Muhammad Ibn Tumart—the Mahdi of Muslim Spain—who was Berber by nationality, came to power and established the pontifi cal rule of the Muwahhidun, he ordered for the sake of the illiterate Berbers that the Quran should be translated and read in the Berber language and that the call to prayer should be given in Berber.
  • Such is the attitude of the modern Turk, inspired as he is by the realities of experience, and not by the scholastic reasoning of jurists who lived and thought under different conditions of life. To my mind these arguments, if rightly appreciated, indicate the birth of an International ideal, which forming the very essence of Islam, has been hitherto overshadowed or rather displaced by Arabian Imperialism of the earlier centuries in Islam.
  • The republican form of government is not only thoroughly consistent with the spirit of Islam, but has also become a necessity in view of the new forces that were set free in the world of Islam.
  • The more genuine schools of Sufism have, no doubt, done good work in shaping and directing the evolution of religious experience in Islam; but their latter-day representatives, owing to their ignorance of the modern mind, have become absolutely incapable of receiving any fresh inspiration from modern thought and experience. They are perpetuating methods which were created for generations possessing a cultural outlook differing, in important respects, from our own
  • Hard his lot and frail his being, like a rose leaf, yet no form of reality is so powerful, so inspiring, and so beautiful as the spirit of man.

  
DOWNLOAD

Complete Download
Allama iqbals great writings on Islamic philosophies


forex trading Books online,, free domain,

29 جون، 2011

sab kuch luta k hosh main aey to kya hua



orya maqbool jan pakistan afghanistan and america


Forex trading

JAVED NAMA english translation


domain name yahoo



JAVAID NAMA
Versified English Translation

by
Dr. Muhammad Iqbal


Translated from the Persian
with introduction and notes
ARTHUR J. ARBERRY



Download complete translation of JAVAID NAMA by allama Iqbal in pdf.
free download.
A master piece of Dr Allama muhammad Iqbal, the poet of east(SHAER E MASHRIQ)



forex trading

20 جون، 2011

Pakistan and american relations



Pakistan and american relations
By Gen Mirza Aslam Baig
retired chief of army staff pakistan.


بھارتی امریکا یا امریکی بھارت











بھارتی امریکا یا امریکی بھارت؟؟؟

آستین کا سانپ یا سانپ کی آستیں؟؟؟ 
اسامہ اباما ڈرامہ کا منظرنامہ 

امریکا نے پاکستان کو نشانہ بنانے کے لیے افغانستان کو ٹھکانہ اور عراق کو بہانہ بنایا ہے 

طارق اسماعیل ساگر

Bharti amrica ya amrici bharat

Qoumi manzarnama by Tariq Ismail Sagar.
Published in Mirrat ul arifeen international
Alfaqr.net

Indian america ore american india??
aasteen ka sanp ya sanp ki aasteen?
the manzarnama of Usama obama drama.


واقعہ شب معراج قرآن و حدیث کی روشنی میں



واقعہ شب معراج قرآن و حدیث کی روشنی میں
waqiha shab e mehraaj Quran ore Hadith ki roshani main.




Shab e miraj Hadith.
the night when prophet went to meet Allah

saying of the prophet about mehraj night

 




 The night of miraj.
ahadees.




the night of mehraaj


 سُبْحَانَ الَّذِي أَسْرَىٰ بِعَبْدِهِ لَيْلًا مِّنَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ إِلَى الْمَسْجِدِ الْأَقْصَى الَّذِي بَارَكْنَا حَوْلَهُ لِنُرِيَهُ مِنْ آيَاتِنَا ۚ إِنَّهُ هُوَ السَّمِيعُ الْبَصِيرُ
Glory to (Allah) Who did take His servant for a Journey by night from the Sacred Mosque to the farthest Mosque, whose precincts We did bless,- in order that We might show him some of Our Signs: for He is the One Who heareth and seeth (all things).

ALQURAN [17:1]

Surat Al-'Isrā' (The Night Journey)








Shab e mehraaj

Here we shall narrate the event according to the Jami us-Sahih of Imam Muslim. The Messenger (SAW) says:

“One night I was asleep, in the Harim near the Kaabah when I was woken by Jibril. He informed me of the Diving will and took me to the well oz Zam Zam, where upon he opened by chest and poured wisdom and faith into it. Then he sealed it. I was then presented with a beautiful Buraq. This is an animal larger than a mule but smaller than a horse. I mounted it.”
It traveled at phenomenal speed. The Messenger (SAW) was soon at the second precinct of Masjid al-Aqsa. There all of the prophets of the past ages were assembled and waiting for him. He lead them in congregational prayer.

This noble assembly marked the end of the horizontal part of the journey. From here, accompanised by Jibril (AS), the Messenger (SAW) traveled on the Buraq ascending the heavens.
In the first heaven, He (SAW) met Adam (AS), who greated Him (SAW) with love and affection in the
words, “Welcome O righteous Son!”

The ascension continued to the second heavens where He (SAW) met Isa(AS) and Yayha (AS), then on to the third heaven where He (SAW) was met by Yusuf(AS), on the fourth by Idris (AS), on the fifth by Harun (AS), and on the sixth by Musa (AS) and on the seventh He (SAW) was greeted by Ibrahim(AS)

The journey continued beyond the heavens until He (SAW) reached the Baiy al Mamur – The Kaabah of the Angels, from where He ascended to the Lote tree of the uttermost boundary.

This is the focal point of the Divine mercy. Jibril (AS) then reached the point where he was not allowed to travel any further. It was at this point that he parted from Muhammad (SAW) The Prophet (SAW) continued alone, but where to ? That is beyond the point of human grasp.

The Glorious Quran alludes to it, in Surah An-Najm [53] Ayah 8:

ثُمَّ دَنَا فَتَدَلَّىٰ

Then he approached and came closer,


What happened there is also in the realm of a mystery. We are just told that He revealed to
His servant what he revealed, in Ayah 10 of Surah An-Najm:


فَأَوْحَىٰ إِلَىٰ عَبْدِهِ مَا أَوْحَىٰ

So did (Allah) convey the inspiration to His Servant- (conveyed) what He (meant) to convey.



Ayats and hadith about shab e mehraaj.
shab e mehraaj ka waqiha,

17 جون، 2011

aik lakh nomuslim goray



large number of peoples converting to islam specially females in europe and america,
why they are accepting Islam??
in 2010 in england every day 15 peoples converted to islam


forex trading

16 جون، 2011

شہاب نامہ سے اقتباس

شہاب نامہ سے اقتباس 

پہلی جنگ عظیم کے بعد دُنیا میں امن و امان کو فروغ دینے کے لیے 'لیگ آف نیشنز' وجود میں‌آئی' لیکن یہ تنظیم کفن چوروں کی تنظیم ثابت ہوئی۔اقوام عالم میں بہت سی قبریں بنوانے کے بعد اس نے جینیو ! میں دم توڑ دیا۔ دوسری جنگ عظیم کے بعد'اقوام متحدہ' نے جنم لیا۔جس کی لاٹھی اسی کی بھینس ' اس ادارے کا رہنما اصول ہے۔

جب کوئی لاٹی والا طاقتور ملک جارحیت سے کام لے کر کسی چھوٹے اور کمزور ملک کی بھینس زبردستی ہنکا کر لے جاتا ہے تو اقوام متحدہ فورا جنگ بند کا اعلان کر کے فریقین کے درمیان سیز فائر لائن کھینچ دیتی ہے۔اس خط پر اقوام متحدہ کی نامزد کردہ فوج اور مبصر متعین ہو جاتے ہیں جو خصوصی طور پر خیال رکھتے ہیں کہ مسروقہ بھینس دوبارہ اپنے مالک کے پاس نہ پہنچنے پائے۔اس کے بعد سارا معاملہ جنرل اسمبلی اور سیکورٹی کونسل کی قراردادوں میں ڈھل ڈھل کر پابندی کے ساتھ اقوام متحدہ کے سرد خانے میں جمع ہوتا رہتا ہے۔


Pakistan has its roots in Islam


 Pakistan has its roots in Islam

Emma Duncan in her book – "Breaking the Curfew" – describes Pakistanis as a nation which has ideas without ideologies and ideologies without ideas. Today, extremism and intolerance is engulfing the nation and we are passing through the worst crisis of identity. To achieve this objective, we need to look back in order to trace our true ideology. During the Allahabad session of the All-India Muslim League in 1942, Quaid-e-Azam Muhammad Ali Jinnah was asked as to what type of state Pakistan would be, he replied: "It will be an Islamic state on the pattern of Medina state with human rights, liberalism, democracy and complete tolerance and freedom of conscience to all citizens without any distinction of colour, creed, language, and race as granted by the Prophet of Islam Muhammad (Peace Be Upon Him) to Christians, Jews, idol worshippers and all others. Justice, brotherhood, liberty, equality and fraternity will reign supreme." 

In his speech at the Frontier Muslim League Conference on 21 November 1945, Quaid-e-Azam said: “We have to fight a double-edged battle, one against the Hindu Congress and the other against British imperialists, both of them being capitalists. The Muslims demand Pakistan where they could rule according to their own code of life and according to their own cultural growth, traditions, and Islamic Laws.” 

Similarly, in his Eid message to the nation in 1945, Quaid-e-Azam said: “From the Atlantic to the Ganges, the Quran is acknowledged as the fundamental code, not of theology but of civil and criminal jurisprudence, and the laws which regulate the actions and the properties of mankind are regulated by the immutable sanctions of the Will of Allah”. He said, “Everyone, except those who are ignorant, knows that the Quran is the general code of the Muslims. A religious, social, civil, commercial, military, judicial, criminal penal code; it regulates everything from the ceremonies of religion to those of daily life; from the salvation of the soul to the health of the body; from morality to crime, from punishment here to hereafter and our Prophet (Peace Be Upon Him) has enjoined on us that every Muslim should possess a copy of the Quran and be his own priest. Therefore, Islam is not confined to the spiritual tenets and doctrines and rituals and ceremonies. It is a complete code regulating the whole Muslim society in every department of life, collective and individually.”  

Pakistan emerged as an independent state on 14th August 1947 as a result of an ideology. The strength of the ideology can be judged from the fact that only religion acts as a binding force for five distinct provinces of Pakistan, as each province has a discrete identity in term of customs, norms, traditions, languages and dialects. Today Objective Resolution serves as the preamble of our Constitution. No doubt, Objective Resolution should be our ultimate goal. We cannot hide the truth by closing our eyes or burring of old syllabus in our country and confiscating translations of Holy Quran, only because it talks about why Pakistan was created and what is our final destination. 

The Basic Principle Committee was appointed by a resolution of the Constituent Assembly, dated 12 March 1949, to report, in accordance with the Objective Resolution, on the main principles on which the future constitution of Pakistan should be framed. The Interim Report of the Basic Principle Committee was presented to the Constituent Assembly on September 28, 1950. In accordance with the Resolution of the Constituent Assembly dated November 21, 1950, the interim report was published for inviting suggestions from the public. These suggestions were to be received in the Secretariat of the Constituent Assembly by January 31, 1951. After examinations of bulk of the suggestions, the Basic Principle Committee submitted recommendations as the basis on which the future constitution of Pakistan should be drafted. It is pertinent to mention here that the Basic Principle Committee also appointed five members from minorities through the resolution dated March 12, 1949, including Sir Muhammad Zafrullah Khan, Jogendra Nath Mandal, Kamini Kumar Dutta, Sris Chandra Chattopadhyaya and Prem Hari Barma. If we critically examine the Objective Resolution of March 1949, we would be able to conclude that the question of rights of the minorities has been very carefully and exclusively addressed. Minorities have been given guarantee that their education and culture would be adequately safeguarded. 

According to Para 2 (2) of Chapter II – Directive Principles of the State Policy, steps have been specified which should be taken in various spheres of the governmental activities to enable the Muslims to order their lives individually and collectively in accordance with the Holy Quran and Sunnah. According to Para (2) (a), facilities should be provided to them to understand what life in accordance with the Holy Quran and Sunnah means, and the teaching of the Holy Quran to the Muslims should be made compulsory. Para (3) recommended that an organization should be set up for making the teachings of Islam known to the people, and for ‘Amr-Bil-Maruf’ and ‘Nahi-Anil-Munkar’. Para (8) recommends that the state should make every effort to remove illiteracy from the country within minimum possible period. While Para (9) recommended that it should be the endeavour of the state to enable, within the minimum possible time, the population of different areas, through training and education, to participate fully in all forms of national activity and service. It is an irony that despite 63 years of our existence we are still unable to enforce Objective Resolution. Quaid-e-Azam had guided for an Islamic constitution within 22 months. Thus, immediately after his death, Prime Minister Liaquat Ali Khan formed a committee of Ulema to decide the Islamic guidelines for Pakistan's Constitution in which Jamaat-i-Islami led by Maulana Maudoodi and other religious parties played an important role in giving an Islamic orientation. 

The Objectives Resolution was the outcome, which was adopted by the Constituent Assembly in March 1949. On the guidelines of Objective Resolution, the 1956 Constitution was passed by the assembly which endorsed Islamic principles and declared Pakistan as an Islamic Republic. However, the ruling class and the elite were quite critical of the new development in the new state of Pakistan as they wanted to build Pakistan as a secular state keeping in mind their Western education and contributions to the freedom struggle. This led to a clash between those possessing modern thoughts and orthodox religious groups. The orthodox religious transformed into political expression when they demanded expulsion of Qadianis (Ahmadiyas) in 1953 in the province of Punjab. Tussle between western educated elites and religious groups led to the imposition of martial law for the first time in Pakistani history to bring the situation under control. 

The Enquiry Commission appointed to look into the anti-Ahmediya riots highlighted the internal in-congruencies and contradictions in the ideas of orthodox religious bodies who are presumed to be authorities on matters of religion and ideology. The Commission recommended, "Nothing but a bold reorientation of Islam to separate the vital from the lifeless can preserve it as a world idea and convert the Mussalman into a citizen of the present and future world from the archaic incongruity that he is today...” A new constitution was framed by the General Ayub Khan government in 1962 which removed the label of Islamic Republic by rationalizing that the state could not be theocratic because there was no priesthood in Islam, and as such, it is "theocratic only to the extent that real sovereignty belongs to God." Important changes were also made in the Preamble i.e. from the paragraph, which used to read 

"...the authority to be exercised by the people of Pakistan within the limits as prescribed by Him (Allah) is a sacred trust," the words "within the limits prescribed by Him" were removed. In the first Constitutional Amendment Act, however, General Ayub Khan reinstated the phrase Islamic Republic of Pakistan under pressure from religious parties. His secular credentials were confirmed when he implemented the recommendation of the 1955 Commission in the shape of Muslim Family Laws Ordinance of 1961. During the 1965 elections, he took the help of orthodox religious groups to issue a fatwa to de-legitimize the contesting of Mohtarma Fatima Jinnah for the office of president on religious grounds that a woman cannot become the head of an Islamic state. The orthodox parties demanded Nizam-i-Mustafa. Zulfikar Ali Bhutto got a law passed, approving minority status for the Ahmedis, and also allowing enough leverage to the orthodox parties in the educational institutions to satisfy the religious groups. In April 1977, Bhutto announced a set of Shariat laws banning horse racing and drinking of alcohol, and declared Friday as the official holiday in conformity with the Islamic ideology on July 1, 1977. This was followed by the rule of General Ziaul Haq during which additional efforts were made to Islamize Pakistan. Today, if we critically examine sectarianism and extremism we would find that in most cases it resolves around the dispute to create Pakistan as a welfare Islamic state on the pattern of Medina at the time of Holy Prophet Muhammad (May Peace Be Upon Him) or a secular state on the pattern of India and other non-believer nations. One wonders how still some among us fail to identify the Islamic roots in Pakistan and do not comprehend the essence of our ideology and Objective Resolution. To enforce secularism and evils of the western and non-believer nations there is only one way — to eliminate the overwhelming majority in the country and allow a small minority to live and rule Pakistan.

constitution making process of pakistan, where we went wrong?
pakistan is an islamic or secular state??

Forex trading

12 جون، 2011

A beauty article by Orya on pakistan america relations

نہ جا اس کے تحمل پر کہ بے ڈھب ہے گرفت اس کی
[Sahih Bukhari: Volume 8, Book 73, Number 43]

Narrated 'Aisha (Radi Allah Anha): The Prophet (sal-allahu-alleihi-wasallam)said "Gabriel continued to recommend me about treating the neighbors Kindly and politely so much so that I thought he would order me to make them as my heirs.
[Sahih Bukhari: Volume 8, Book 73, Number 45]

Narrated Abu Shuraih (Radi Allah Anhu): The Prophet (sal-allahu-alleihi-wasallam) said, "By Allah, he does not believe! By Allah, he does not believe! By Allah, he does not believe!" It was said, "Who is that, O Allah's Apostle?" He (sal-allahu-alleihi-wasallam) said, "That person whose neighbor does not feel safe from his evil." 
[Sahih Bukhari: Volume 8, Book 73, Number 47]

Narrated Abu Huraira (Radi Allah Anhu): Allah's Apostle (sal-allahu-alleihi-wasallam) said, "Anybody who believes in Allah and the Last Day should not harm his neighbor, and anybody who believes in Allah and the Last Day should entertain his guest generously and anybody who believes in Allah and the Last Day should talk what is good or keep quiet. (i.e. abstain from all kinds of evil and dirty talk).



f



A beautiful article Written by Orya maqbool jan on the current situation of pakistan.
killing of sarfaraz by rangers.
rights of neighbors, where we went wrong on Afghanistan issue



Forex trading

10 جون، 2011

افغانستان میں اقبالؒ کی آہ و فغاں

افغانستان میں اقبالؒ کی آہ و فغاں
تحریر: سید علی گیلانی
(چیئرمین حریت کانفرنس مقبوضہ کشمیر)

اکتوبر 1933ء میں علامہ مرحوم نے افغانستان کا دورہ کیا۔ بہتر یہ ہے کہ افغانستان کی سیاحت کے دوران میں جو کچھ انکے ارشادات‘ جوابات‘ احساسات اور فرمودات مثنوی کے صحفات میں زینت پا چکے ہین‘ انکے جستہ جستہ حصے ہدیہ قارئین کئے جائیں۔

علامہ مرحوم کا کلام خاص طور فارسی زبان میں بحر بے کراں ہے۔ انکا احاطہ کرنا مجھ جیسے ناتواں شخص کیلئے ناممکنات میں سے ہے۔ جیسا کہ میں نے ابتدائی سطور میں گزارش کی ہے کہ میری صرف یہ کوشش ہے کہ اقبال کی اس بنیادی صفت اور خصوصیت کو امکان حد تک بیان کروں کہ وہ فلسفی‘ بار ایٹ لا اور مغربی فلسفہ اور تہذیب و تمدن کے شناور ہونے کے ساتھ ساتھ کس طرح روح دین کے شناسا اور واقف حال تھے؟ کس طرح انہوں نے اپنے کلام میں اسلام کی اصل روح کو اجاگر کرنے اور ذہن نشین کرانے کی کوشش کی ہے؟ انکے دل میں اسلام اور ملت کیلئے کتنا درد‘ کتنا اضطراب اور کتنی بے چینی تھی؟ اس کا اندازہ ان کے فارسی کلام کے مطالعے سے ہوتا ہے۔

وہ ملتِ مرحومہ کے تابناک اور شاندار ماضی سے واقف تھے۔ ان کی نظروں میں رسالت مآب ؐ کا دورِ سعادت تھا۔ انکی نگاہوں میں قرون اولیٰ کے مسلمان تھے۔ پھر ان کی تربیت میں تشکیل پذیر وہ کردار اور سیرتیں تھیں جنہوں نے خلاف راشدہ کے مثالی دور کی نقش بندی کی تھی اور ہمہ جہت انقلاب کی داغ بیل ڈال کر تا صبح قیامت ایک بے مثال معاشرے کی تشکیل کر کے بنی نوع انسان کی آرزوؤں اور تمناؤں کو مرکز اور محور بنایا تھا۔ صدیاں گزر جانے کے بعد بھی وہ مثالی دور دیکھنے میں نہیں آ رہا ہے۔ اقبال کی تمنا اور آرزو صرف یہ تھی کہ ملتِ مرحومہ اُسی مثالی دور کی یاد تازہ کر کے اور اسی کا آئینہ سامنے رکھ کر اپنا منصبی فریضہ انجام دینے کیلئے سرگرم عمل ہو جائے۔ وہ ملت کی موجودہ حالت دیکھ کر ماہی بے آب کی طرح تڑپتے تھے۔ اسکے ذہنی اور عملی انحطاط اور زوال کو دور کرنے کیلئے آتش زیرپا تھے۔ وہ ملت کی اس صورتحال کی تشخیص کر چکے تھے اور برملا کہتے تھے کہ ملت‘ قرآن اور سنت مطہرہ سے دور اور بے گانہ ہو چکی ہے اور یہی اسکے امراض کی جڑ اور کُنہ ہے۔ انہوں نے ملت کے موجودہ انتشار اور افتراق کی تصویر کشی کر کے اسکے اعتماد اور اتفاق کیلئے دردمندانہ آواز بلند کی تھی :
ایک ہوں مسلم حرم کی پاسبانی کے لئے نیل کے ساحل سے لے کر تابخاک کاشغر
جو کرے گا امتیاز رنگ و خوں مٹ جائے گا
تُرک خرگاہی ہو یا اعرابی والا گہر
نسل اگر مسلم کی مذہب پر مقدم ہو گئی
اڑ گیا دنیا سے تو مانند خاک رہ گزر
تاخلافت کی بنا دنیا میں ہو پھر استوار
لا کہیں سے ڈھونڈ کر اسلاف کا قلب و جگر

خلافتِ علیٰ منہاج نبوت کا قیام نہ صرف ملتِ مرحومہ کی بیماریوں کا علاج ہے بلکہ یہ ملت اسلامیہ کی ذمہ داری بھی ہے۔ آج کی دنیا میں انسان جس بے چینی اور اضطراب اور نوع بنوع مسائل سے دوچار ہے۔ انسان کا خون پانی کی طرح ارزاں ہے اور سارے ازم انسان کو امن و آشتی اور خوشحالی و فراغت دینے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکے ہیں۔ جب تک خلافت راشدہ کے صالح نظام کی بنیادوں پر وحدتِ الٰہ اور وحدتِ آدم کا تصور عام کر کے عدل و انصاف کا نظام قائم نہ ہو‘ انسان موجودہ خوں ریزی اور استحصال سے نجات نہیں پا سکتا۔ افغانستان کی سرزمین پر قدم رکھتے ہی علامہ محمد اقبال‘ نادر شاہ مرحوم کی تُربت پر حاضری دیتے ہیں اور اپنی عقیدت‘ محبت اور ان کے اوصاف حمیدہ کی تعریف کرتے ہیں۔
نادر شاہ یقیناً اسم بامسمیٰ ایک نادر اور درویش صفت سربراہ مملکت تھے۔ اللہ تعالیٰ کی رحمت بے پایاں ان کی تربت پاک پر ہو۔ انکی تدابیر اور حکمت عملی کے نتیجے میں ملت مرحومہ کے اجتماعی وجود میں استحکام اور استقلال پیدا ہوا تھا۔ انکی شمشیر بُرّان دین کی حفاظت کیلئے تھی۔ علامہ اقبال کے نزدیک اس حقیقت کا واضح ادراک اور اعتراف تھا کہ مسلمان کی تلوار‘ ظلم و جبر اور انسانی حقوق کی پامالیوں کیلئے نہیں ہوتی‘ بلکہ وہ صرف اور صرف اللہ تعالیٰ کے پسندیدہ دین اسلام کے احیا کیلئے اور اسکے دئیے ہوئے عادلانہ نظام کو قائم کرنے کیلئے استعمال ہوتی ہے کیونکہ پوری انسانی برادری کیلئے اس دین مبین میں فلاح و بہبود اور امن و آشتی ہے۔
نادر شاہ مرحوم‘ حضرت ابوذر غفاریؓ کی طرح نماز میں سوز و گزار کا مجسمہ ہوتے تھے اور جب دشمن کے ساتھ مقابلہ ہوتا تھا اور کوئی معرکہ آرائی ہوتی تھی‘ انکی شمشیر کی ضرب اور کاٹ پتھروں کو بھی شق کرتی تھی۔ افغانستان کے اس بادشاہ کے زمانے میں انکی حکمرانی کے انداز اتنے حسین و جمیل تھے کہ عہد صدیقف کے انداز حکمرانی کی یادیں تازہ ہو جاتی تھیں۔ یہ علامہ اقبال کی تمناؤں اور آرزوؤں کی عکاسی ہے۔ انکے جلال اور دبدبے سے عہد فاروقی کی یادیں تازہ ہو گئیں۔
جس طرح گل لالہ کے سینے میں اس کا سایہ داغ اسکی شناخت اور پہچان ہوتی ہے‘ اسی طرح نادر شاہ کے دل میں دین مبین کا غم اور درد تھا۔ مشرق کی تاریک رات میں انکے وجود کی مثال روشن چراغ تھی۔ اس کی نگاہ میں ارباب ذوق کی مستی اور اسکی روح کا جوہر‘ سراپا جذب و شوق ہے۔ شمشیر خسروی اور درویشانہ نگاہ‘ یہ دونوں موتی لاالٰہ کے سمندر سے ہی حاصل ہو سکتے ہیں۔ گویا اسلام کی بنیادی تعلیمات میں انہی کے اثر اور عمل آوری کے نتیجے میں اقتدار پر براجمان بادشاہ‘ درویش صفت متقی‘ خدا ترس‘ آخرت پسند اور انسان دوست ہوتے ہیں۔ فقر اور شاہی کا ایک ساتھ ہونا‘ یہ صرف رسول کریمؐ کی سیرت پاک اور اسوہ حسنہ کی دین اور کرشمہ سازی ہے۔ یہ برکتیں‘ رحمتیں اور سیرت و کردار کی عظمتیں صرف رسول رحمت کی ذات مبارک کی جلوہ سامانیاں ہیں۔
یہ دونوں قوتیں مومن کے کردار کی نمایاں صفات اور خصوصیات ہیں۔ دنیوی اقتدار و قوت‘ طاقت اور شان و شوکت انکی ذات‘ خاندان‘ قوم یا خدا بے زار افراد کیلئے نہیں بلکہ مجموعی طور انسان کی فلاح اور کامرانی و کامیابی کیلئے ہی حکومت کی یہ طاقت استعمال کی جاتی ہے۔ مومن کی زندگی میں قیام و سجود‘ زندگی کے دو پرتو ہوتے ہیں۔ حکومت کا اقتدار‘ انکے قیام اور سجود ان کیلئے بندگی کا مظہر اور اعلان ہوتا ہے۔ فقر‘ سوز‘ درد‘ داغ اور آرزو ہے۔ فقر کو رگ و ریشہ ایں اتارنا‘ داخل کرنا‘ آبرو مندی ہے۔ نادر شاہ نے فقر کو اپنے رگ و ریشے اور خون میں داخل کر دیا تھا۔ یہی فقر اسکی زندگی کا شعار اور نشان بنا تھا۔ اس مرد شہید‘ افغانستان کے درویش صفت بادشاہ نادر کے اس انداز فقر پر صد آفرین اور ہار بار تحسین! اے باد صبح کے تیزگام مسافر! نادر شاہ کے مرقد پر نرم رو اور سبک سر ہو کر طواف کر لے۔ وہ اپنے مرقد میں محو استراحت ہے‘ اس لئے باد صبا! اپنے قدم آہستہ آہستہ رکھ۔ تیری آمد سے جو غنچے کھل اٹھتے ہیں‘ انکی گرہیں آہستگی سے کھول۔ میری طرف سے عقیدت کے یہ پھول نچھاور کرنے کے بعد اسکی طرف سے میرے لئے فرمان صادر ہوا۔ اس فرمان شاہی نے میرے خاکی وجود میں تازہ روح اور زندگی کی لہر دوڑا دی۔

٭۔ فرمانِ شہ نادر
اے مسافر! تیری درد بھری اور پرتپش آواز سے میں جل اٹھا ہوں۔ وہ قوم کتنی خوش بخش‘ خوش نصیب اور لائق صد آفرین ہے جو تیری زندگی کے راز‘ تیرے دل کی دھڑکن‘ تیری تمنا‘ تیری آرزو اور تیرے مقاصد و اہداف سے واقف اور جانکاری رکھتی ہو۔
اے میرے عقیدت مند! تیرے اس غم دین و ملت سے ہماری قوم پوری طرح آشنا اور واقف راز ہے۔ ہماری ملت اور افغان قوم جانتی ہے کہ درد و اخلاص سے پُر یہ آواز کہاں سے آ رہی ہے۔ ہمارے آغوش سحاب میں بجلی کی طرح کڑکنے والے تیرے نور اور تیری پرسوز آواز سے پورا مشرق روشن اور تابند ہے۔
ایک طویل عرصے تک ہمارے کوہساروں میں درخشندگی اور تابناکی کا مظاہرہ کرے۔ دین اسلام اور رسول رحمتؐ کے ساتھ ہمارا ایمان‘ محبت اور عشق میں وہی تابندگی‘ استحکام اور استقلال پیدا کر دے‘ جو مطلوب و مقصود ہے۔
تم کب تک بندشوں اور حصاروں میں بندھے اور گھرے رہو گے۔ تیرا پیغام کلیمی ہے۔ تجھے سینا کی وادیوں کی تلاش میں سرگرم سفر رہنا چاہیے۔
اس نادر شاہی فرمان کے بعد اقبال افغانستان میں اپنی سیاحت کے بارے میں فرماتے 
ہیں 

’’میں نے افغانستان میں باغ‘ مرعزار اور دشت و صحرا چھان مارے‘ باد صبا کی طرح میں نے افغانستان کے پہارڑ اور ٹیلے دیکھ بھال لئے۔ درہ خیبر مردان حق آشنا سے نامانوس نہیں ہے۔ اس کے دل میں تو ہزاروں افسانے‘ واقعات اور تاریخی شواہد پوشیدہ ہیں۔ اس راہ کے نشیب و فراز اور پیچ و خم میں تو انسان کی نظر بھی گم ہو جاتی ہے۔ افغانستان کے کہساروں کے دامن میں آپ سبزہ تلاش نہ کریں۔ اس کے ضمیر میں رنگ و بو کی نمود اور اٹھان نہیں ہے۔ اس سرزمین کے چکور‘ شاہین صفت اور شاہین مزاج ہیں۔ اس سرزمین غیرت مند کے ہرن‘ شیروں سے بھی خراج وصول کرتے ہیں۔
‘‘
ان اشعار میں افغانیوں کی غیرت مندی‘ حوصلہ‘ ہمت‘ جوان مردی اور بہادری کی تعریف کی گئی ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ افغانیوں نے برطانوی سامراج‘ روسی سامراج اور اشتراکی مزاج اور فلسفہ کو شکست دے دی۔ آج اقبال کے کلام بلاغت نظام کے حوالے سے افغان کا تذکرہ آ رہا ہے‘ تو افغانستان کے غیر مند عوام آج امریکی اور اس کے اتحادیوں کے ظلم و جبر‘ انسان کشی اور بدترین قسم کی سامراجی چالو اور فریب کاریوں کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ نیٹو کی فوجیں افغانیوں کی ہمت اور حوصلہ مندی کی بزبان حال معترف ہیں۔ بہت جلد وہ روسی سامراج کی طرح وہاں سے نکل کھڑی ہوں گی اور افغان قوم اپنا دینی اور ملی تشخص پھر بحال کرنے میں کامیاب و کامران ہو گی۔ انشاء اللہ۔ طالبان اور القاعدہ کے نام محض ایک بہانہ ہے۔ امریکی اور ان کے اتحادی سامراج کے قمابلے میں براہ راست افغان عوام معرکہ آرائی میں مصروف ہیں۔ ان کے معصوم بچے‘ خواتین اور عام شہری‘ سامراجی قونوں کی بم باری کا نشانہ بن رہے ہیں …ع
ہے کہاں روزِ مکافات اے خدائے دیر گیر 


٭۔ فرمانِ شہ نادر
اے مسافر! تیری درد بھری اور پرتپش آواز سے میں جل اٹھا ہوں۔ وہ قوم کتنی خوش بخش‘ خوش نصیب اور لائق صد آفرین ہے جو تیری زندگی کے راز‘ تیرے دل کی دھڑکن‘ تیری تمنا‘ تیری آرزو اور تیرے مقاصد و اہداف سے واقف اور جانکاری رکھتی ہو۔

اے میرے عقیدت مند! تیرے اس غم دین و ملت سے ہماری قوم پوری طرح آشنا اور واقف راز ہے۔ ہماری ملت اور افغان قوم جانتی ہے کہ درد و اخلاص سے پُر یہ آواز کہاں سے آ رہی ہے۔ ہمارے آغوش سحاب میں بجلی کی طرح کڑکنے والے تیرے نور اور تیری پرسوز آواز سے پورا مشرق روشن اور تابند ہے۔ ایک طویل عرصے تک ہمارے کوہساروں میں درخشندگی اور تابناکی کا مظاہرہ کرے۔ دین اسلام اور رسول رحمتؐ کے ساتھ ہمارا ایمان‘ محبت اور عشق میں وہی تابندگی‘ استحکام اور استقلال پیدا کر دے‘ جو مطلوب و مقصود ہے۔ تم کب تک بندشوں اور حصاروں میں بندھے اور گھرے رہو گے۔ تیرا پیغام کلیمی ہے۔ تجھے سینا کی وادیوں کی تلاش میں سرگرم سفر رہنا چاہیے۔ اس نادر شاہی فرمان کے بعد اقبال افغانستان میں اپنی سیاحت کے بارے میں فرماتے ہیں :

’’میں نے افغانستان میں باغ‘ مرعزار اور دشت و صحرا چھان مارے‘ باد صبا کی طرح میں نے افغانستان کے پہارڑ اور ٹیلے دیکھ بھال لئے۔ درہ خیبر مردان حق آشنا سے نامانوس نہیں ہے۔ اسکے دل میں تو ہزاروں افسانے‘ واقعات اور تاریخی شواہد پوشیدہ ہیں۔ اس راہ کے نشیب و فراز اور پیچ و خم میں تو انسان کی نظر بھی گم ہو جاتی ہے۔ افغانستان کے کہساروں کے دامن میں آپ سبزہ تلاش نہ کریں۔ اسکے ضمیر میں رنگ و بو کی نمود اور اٹھان نہیں ہے۔ اس سرزمین کے چکور‘ شاہین صفت اور شاہین مزاج ہیں۔ اس سرزمین غیرت مند کے ہرن‘ شیروں سے بھی خراج وصول کرتے ہیں۔‘‘
ان اشعار میں افغانیوں کی غیرت مندی‘ حوصلہ‘ ہمت‘ جوان مردی اور بہادری کی تعریف کی گئی ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ افغانیوں نے برطانوی سامراج‘ روسی سامراج اور اشتراکی مزاج اور فلسفہ کو شکست دیدی۔ آج اقبال کے کلام بلاغت نظام کے حوالے سے افغان کا تذکرہ آ رہا ہے‘ تو افغانستان کے غیر مند عوام آج امریکی اور اسکے اتحادیوں کے ظلم و جبر‘ انسان کشی اور بدترین قسم کی سامراجی چالو ںاور فریب کاریوں کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ نیٹو کی فوجیں افغانیوں کی ہمت اور حوصلہ مندی کی بزبان حال معترف ہیں۔ بہت جلد وہ روسی سامراج کی طرح وہاں سے نکل کھڑی ہوں گی اور افغان قوم اپنا دینی اور ملی تشخص پھر بحال کرنے میں کامیاب و کامران ہو گی۔ انشاء اللہ۔ طالبان اور القاعدہ کے نام محض ایک بہانہ ہے۔ امریکی اور انکے اتحادی سامراج کے مقابلے میں براہ راست افغان عوام معرکہ آرائی میں مصروف ہیں۔ انکے معصوم بچے‘ خواتین اور عام شہری‘ سامراجی قوتوں کی بم باری کا نشانہ بن رہے ہیں …ع
ہے کہاں روزِ مکافات اے خدائے دیر گیر
پیرروم کا پیغام: رزق اللہ سے طلب کر، کسی زید یا عمر سے طلب نہ کر، مستی، جوش اور جذبہ اللہ تعالیٰ سے بندگی کا تعلق استوار کر کے حاصل کرنے کی کوشش کر۔ بھنگ اور شراب سے مستی اور نشہ تلاش مت کر، مٹی مت کھاؤ، مٹی مت خریدو اور مٹی کی تلاش میں مت پھرو کیونکہ مٹی کھانے والا ہمیشہ زرد رہتا ہے۔ دل کو تلاش کرو تاکہ ہمیشہ جاوداں وجوان رہو۔ اللہ کی معرفت سے تمہارا چہرہ گلاب کی مانند شاداب اور تازہ ہو گا اللہ کا بندہ بن کر زندگی گزارنے کا طریقہ اور راستہ اختیار کرو اور زمین پر تیز رو گھوڑے کی طرح رہو جنازے کی طرح زندگی نہ گزارو کہ جو دوسروں کی گردنوں اور شانوں پر اٹھایا جاتا ہے‘ پیرِ رومی کا پیغام پہنچانے کے بعد حکیم الامت کا کلام شروع ہو رہا ہے۔
نیلے آسمان کی شکایت مت کرو، انسان کی زندگی میں جو حادثات،واردات اور رنج و محن آتے ہیں ان کو اکثر گردش آسمان اور تقدیر سے وابستہ کیا جاتا ہے اقبال فرماتے ہیں کہ اپنی ذات کو محور بناؤ اپنی ہی ذات کے آفتاب کے گرد طواف کرنے پرقناعت کرو، آسمان کی شکایت اور گردش دوران کی شکایت لاحاصل عمل ہے۔ ذوق و شوق کے مقام سے آگاہ ہو جاؤ اگرچہ تم ذرہ خاک ہو مگر سورج اور چاند کو اپنی کمند میں لاؤ، عالم موجود، گردوپیش کی دنیا کو جاننے کی کوشش کرو اور دنیا میں اپنا پیغام اور مشن عام کرنے کی کوشش میں مگن رہو اسی طرح تم دنیا میں جانے اور پہنچانے جاؤ گے اور تمہارا آوازہ بلند ہو گا۔ کائنات کا نظام، وحدت کا مظہر ہے اس دنیا میں وحدت سے ہی زندگی قائم ہے۔ ’’ اللہ کے دین کی رسی کو مضبوطی کیساتھ پکڑے رکھو، الگ الگ راستے اختیار مت کرو‘‘ (آل عمران 103-3)
رنگ، زبان، نسل، وطن اور ذات پات پرانے بتوں سے نجات حاصل کرو دور جاہلیت کی نفسانی خواہشات اور رسم ورواج سے پناہ مانگو جاہلیت کی ان رسموں کی قیمت اور حقیقت جُو کے دو دانوں کے برابر بھی نہیں ہے تازہ آرزوؤں کی نقش بندی کرو۔ آخری دین جس کے بارے میں فرمان الٰہی ہے:
’’آج میں نے تمہارے دین کو تمہارے لئے مکمل کر دیا ہے اور اپنی نعمت تم پر تمام کر دی ہے اور تمہارے لئے اسلام کو تمہارے دین کی حیثیت سے قبول کر لیا ہے ‘‘ (المائدہ 3-5) انسان کی زندگی، آرزو پر بنیاد اور اساس رکھتا ہے اپنے آپ کواپنی پاکیزہ تمناؤں اور اعلیٰ آرزوؤں کے حوالے سے پہنچانو جیسے معروف اور متد اول قول ہے:
دُنیا بہ اُمید قائم است!
مومن اور بندہ حق کی امید اور تمنا اللہ کی رضا، خوشنودی اور اسکے دین کی سربلندی، دنیا کی کامرانی اور آخرت کی فلاح ہے اس کیلئے اللہ کا بتایا ہوا راستہ اختیار کرنا ہی مطلوب و مقصود ہے۔ انسان کی آنکھیں، کان، ہوش و حواس، آرزو سے ہی متحرک اور زندہ رہتے ہیں یہ مشت خاک، اولادِ آدم، آرزو سے ہی لالہ خیز بن جاتی ہے۔ ایسی مٹی جس میں گل لالہ اُگتے اور نشونما پاتے ہیں جس انسان نے آرزوؤں اور تمناؤں کے بیج اپنے دل کی کھیتی میں نہ بوئے وہ پتھروں اور اینٹوں کی طرح دوسروں کی پامالی کا شکار اور نشانہ بنتا ہے۔ نیک تمنائیں، بلند ارادے اور مقصد زندگی کے حوالے سے خوش آئند آرزوئیں، ہر بادشاہ اور سردار کا سرمایہ حیات ہیں۔ آرزو ہر فقیر کیلئے جامِ جہاں بین کی حیثیت رکھتی ہے انسان جو آب و گل کا مجسمہ ہے اسکو آرزو ہی انسان بنا دیتی ہے۔ آرزو ہم کو اپنی پہچان اور شناخت بتا دیتی ہے آرزو آگ کی چنگاری کی طرح ہمارے جسم سے بلند ہوتی ہے اور ایک خاک کے ذرے کو آسمان وسعت اور پنہائی سے ہمکنار کر دیتی ہے۔ آذر کی اولاد نے کعبہ تعمیر کیا ایک نگاہ خدا شناس و خدابین نے خاک کو اکیسر بنا دیا تم بھی اپنے بدن میں خودی پیدا کرو اوراپنی مشت خاک کو اکیسر بناؤ۔
 
کابل میں شاہِ افغان اور اقبال:
افغانستان کے سفر کے دوران میں اقبال کابل کے شہر میں وارد ہوتے ہیں اور بادشاہِ وقت کے دربار میں ملاقات کیلئے آتے ہیں۔ اپنے کام میں سب سے پہلے وہ کابل شہر کی تعریف کرتے ہیں اس پورے خطے میں کابل جنت کی مانند ہے اسکے انگوروں سے آبِ حیات جیسا رس حاصل کیا جا سکتا ہے۔ مرزا صائب جو ایران کے مشہور و معروف شاعر تھے انکے بارے میں تاریخ بتا رہی ہے کہ غنی کشمیری کے کلام میں کرالہ پن کے معنی دریافت کرنے کیلئے وہ ایران سے کشمیر آئے تاکہ غنی کشمیری سے اس کشمیری لفظ کے معنی دریافت کریں۔ اقبال کابل کے بارے میں صائب کے شعر کا حوالہ دیتے ہیں جس میں صائب نے کہا ہے

ع
خوشا وقتے کہ چشمم از سوادش سرمہ چیں گردد‘‘


کابل کی دید اور زیارت کا وقت میرے لئے کتنا خوش گوار اور مسرت آگین تھا کہ میری آنکھیں سرمہ چیں ہو گئیں۔ یعنی ان کی بینائی اور بصارت میں اسی طرح تازگی اور افزودگی پیدا ہو ئی جیسے سرمہ لگانے سے ہو جاتی ہے۔
اقبال اس سرزمین کیلئے دعا مانگتے ہیں کہ یہ سرزمین روشن اور پائندہ رہے۔ رات کی تاریکیوں میں اسکے سمن زار دیکھنے کے قابل ہوتے ہیں۔ سہانی صبح اسکی بساطِ سبزہ میں غلطاں و پیچاں رہتی ہے۔ یہ پاک وطن، خوشیوں اور مسرتوں کا مسکن، اسکی ہوائیں شام اور روم کی ہواؤں سے بہتر ہیں یہاں کا پانی چمک دار اور یہاں کی مٹی درخشندہ اور تابندہ ہے۔ اس کی ہواؤں کی لہروں سے مردہ زمین زندہ ہوجاتی ہے۔ اس سرزمین کے راز اور اسرار کا احاطہ نہ حروف میں اورنہ کلام میں کیا جا سکتا ہے۔

مختصر یہ کہ اسکے کہساروں میں کئی آفتاب آرام فرما ہیں۔ کابل شہر کے بسنے والے آسودہ خاطر اور دل لبھانے والے موتی ہیں مگر یہ لوگ اپنے کمالات، جوہر، خوبیوں اور ایمان و یقین کی طاقت سے اسی طرح بے خبر ہیں جس طرح تلوار اپنی طاقت اور قوت سے بے خبر ہوتی ہے۔ قصرسلطانی کا نام بہت ہی د کُشا اور دل رُبا ہے زائرین کیلئے اسکی راہ کی گرد کیمیا کے برابرہے۔ اس بلند و بالا محل میں ، میں نے شاہِ افغان کو دیکھا اس طرح جیسے بادشاہ کے سامنے دردمند دل رکھنے والا کوئی فقیر ہو۔ اسکے خلق نے دلوں کی سلطنتوں کے دروازے کھول دیئے یہاں روایتی طور طریقوں والے بادشاہوں کے درباریوں کے سے رسم و رواج دیکھنے اور ہٹو بچو کی آوازیں سننے میں نہیں آئیں۔

میں انکے دربار میں ایسے ہی تھا کہ حضرت عمر فاروقؓ کے دربار میں کوئی عام انسان اور بے نوا فرد ہو ان کے کلام سے میری روح میں وزوگداز پیدا ہو گیا۔ میں نے محبت سے سرشار ہو کر ان کے ہاتھ کو بوسہ دیا۔ میں نے اس بادشاہ کودیکھا وہ بڑا ہی خوش کلام اور سادہ لباس زیب تن کئے تھا۔ اپنے فرائض کی انجام دہی میں سخت کوش، نرم گفتار اور نرم مزاج اور گرم جوش تھا۔ اس کی نظروں ہی سے صدق و اخلاق ٹپک رہا تھا اس کے وجود سے، اسکی سلطنت میں دین اور حکومت دونوں استوار اور محکم دکھائی دیتے تھے۔
 
وہ بشر ہی تھے مگر فرشتوں سے بھی پاکیزہ تر اخلاق کے حامل تھے۔ طرزِ گفتگو اور نرم مزاجی میں یہ فقروشاہی دونوں مقامات کی اصل اور حقیقت سے بخوبی آگاہ تھے۔ مشرق اور مغرب کے حالات اسکی نگاہوں میں روشن تھے، یعنی وہ حالات زمانہ اور گردوپیش کی دنیا سے بے خبر اور لاتعلق نہیں تھا۔ اس کی حکمت اورشاہانہ تدبر، مشرق و مغرب کے مسائل اور حالات سے پوری طرح باخبر اور باعلم تھے۔ مدبر اور دانا لوگوں کی طرح یہ بادشاہ شہر یار، نکتہ رس اور نکتہ دان تھا اور قوموں اور امتوں کے حال سے واقف تھا۔ اپنی گفتگو میں اس نے معانی کے دروازے کھول دیئے حکومت اور دین کے رموز و نکات واشگاف کئے اس نے مجھ سے کہا کہ دین اور ملت کیلئے جو درد، چبھن اور جذبہ میں نے آپکے اندر دیکھا اور محسوس کیا ہے اس کی بدولت میں آپکو اپنے قریب اور عزیز ترین افراد میں شمار کرتا ہوں ہر اس شخص کو جس میں محبت، نرمی، حسن اخلاق کی بوباس ہو، میری نگاہوں میں اسے ہاشم اور محمود غزنوی کا مقام حاصل کیا۔
 
اس اخلاق کریمانہ کے مالک، شاہ افغان کی خدمت میں، میں نے قرآن پاک کا نسخہ ہدیتاً پیش کیا۔ نسخہ کیمیا پیش کرتے ہوئے میں نے اس سے کہا کہ : اہل حق کا یہی سرمایہ ہے۔ اسکی تعلیمات میں دینی اور اخروی زندگی کی جاودانی اور ابدیت پائی جاتی ہے یعنی اسکی تعلیمات پر عمل کرنے والوں کی دنیا بھی بہتر ہوتی ہے اور آخرت کی ابدی زندگی بھی فلاح اور کامرانی سے ہمکنار ہوتی ہے۔
 
اس کتاب زندگی میں ہر ابتدا کی انتہا ہے یعنی یہ زندگی کے ہر راز سے آگاہ کرتی ہے۔ یہ ہر مسئلے کا کامیاب حل تلاش کرتی ہے۔ اسکی طاقت اور قوت کے بل بوتے پر حضرت علیؓ حیدر کرار نے خیبر کشا کردار انجام دیا۔ میری ان معروضات کا نشہ ا نکی رگوں میں اور خون میں گردش کرنے لگا۔ اس کا اظہار اس طرح ہوا کہ اس کی دونوں آنکھوں سے قطرہ قطرہ آنسو ٹپکنے لگے یہ اسکے دل مومن کی اندرونی کیفیت کا دیدنی اظہار تھا۔ نادر شاہ نے کہا کابل فتح کرنے سے پہلے جب میں اپنے وطن سے دور یورپ میں زندگی بسر کر رہا تھا تو بہت پریشان تھا۔ دین اور وطن کے غم میں گھلا جا رہا تھا۔ میرے اپنے وطن اور ملک کے کوہ و دشت میرے قلبی اضطراب اور بے چینی سے ناواقف تھے۔ میرے بے حساب غم و فکر سے بالکل بے خبر تھے۔ ہزار داستان کی طرح میں نے نالہ زاری کی، موسم بہار میں جوبن پر آئی ہوئی آبجو کے ساتھ میں نے اپنے اشک اور آنسو بہا دیئے۔ اس وقت قرآن کے بغیر میرا کوئی غمگسارنہ تھا اس کتاب کی قوت اور رہنمائی نے میری ہر مشکل آسان بنا دی…؎
غیرِ قرآں غم گسارے من نہ بود قوتش ہر باب را برمن کشود
اس عالی مرتبت خسرو افغانستان کے حکیمانہ اور درد مندانہ کلام سے دوبارہ میرے قلب و ذہن میں جذبات امنڈ آئے۔ اسی گفتگو کے دوران نماز عصر کی اذان کی آواز بلند ہوئی وہ اذان جو مومن کو دنیا مافیہا سے بے خبر بنا دیتی ہے اور وہ دیوانہ وار اذان کی آواز پر سجدہ ریز ہونے کیلئے بے تاب ہوجاتا ہے۔ انتہائی اورناقابل بیان عاشقانہ سوزوگداز کے ساتھ میں نے ان کی امامت اور اقتدار میں نماز ادا کی…ع
راز ہائے آں قیام و آں سجود  

Syed Ali Shah Geelani is a prominent political leader from Jammu and Kashmir who favours the conditional accession of Kashmir to Pakistan. In his early Life, he had formed a party by the name Tehreek-e-Hurriyat, but later on, he dissolved his party and became a member of Jamaat-e-Islami Jammu and Kashmir. However, due to a sequence of events, he has also reformed his own party for the struggle of breaking away from India and securing the right to self-determination for the people of Kashmir, Tehreek-e-Hurriyat, which is a component of All Parties Hurriyat Conference, of which he is the Chairman.
 
Afghanistan main Iqbal ki aah o fughan. Allama iqbal in afghanistan
by
syed ali gillani Chairman all parties Hurriyat Conference Srinagar (APHC)
Allama Iqbal's visit to afghanistan in october 1933.

the great leader of afghanistan nadir shah.
historic evidence and iqbal's writings thjat afghani peoples are brave and dignified.




note buyers, donate a car, investment fraud, content management
home equity loans, cash advance, payday loan, asbestos lawyer
treatment, surgery