ٹیپو سلطان کا سفر آخرت

وہ عالمِ تصور میں میسور کے شیر کو ایک خوفناک دھاڑ کے ساتھ اپنے پرحملہ آور ہوتا دیکھ کر چونک جاتا تھا‘ اسکی سپاہ سرنگا پٹم کے میدان میں جمع ہونے والے سپاہیان اسلام کی نعشوں میں میسور کے شیر کو تلاش کر رہے تھے

مسلمانوں کے ملک میں پرندے بھوک سے نا مر جائیں

زیر نظر تصویر ترکی کی ہے جہاں ایک بہت پرانی اسلامی روایت ابھی تک زندہ ہے کہ جب سردی کا عروج ہو اور پہاڑوں پر برف پڑ جائے تو یہ لوگ چوٹیوں پر چڑھ کر اس وقت تک دانہ پھیلاتے رہتے ہیں جب تک برفباری ہوتی رہے۔ اور یہ اس لیئے ہے کہ پرندے اس موسم میں کہیں بھوک سے نا مر جائیں۔

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔

داستان ایک متکبر کی

سبحان الله ! یہ تھا اسلام کا انصاف

میں اپنا ثواب نہیں بیچوں گا

عموریہ کی جنگ میں پیش آنے والا ایک دلچسپ واقعہ

اگست 26, 2010

Existance of GOD

An atheist professor of philosophy speaks to his class on the problem science has with God, The Almighty.
He asks one of his new students to stand and...

Prof: So you believe in God?
Student: Absolutely, sir.

Prof: Is God good?
Student: Sure.

Prof: Is God all-powerful?
Student: Yes.

Prof: My brother died of cancer even though he prayed to God to heal him. Most of us would attempt to help others who are ill. But God didn’t. How is this God good then? Hmm?
Student: Silent.



Prof: You can’t answer, can you? Let’s start again, young fellow. Is God good?
Student: Yes.

Prof: Is Satan(Shaitan) good?
Student: No.

Prof: Where does Satan come from?
Student: Silent.

Prof: Tell me son, is there evil in this world?
Student: Yes.

Prof: Evil is everywhere, isn’t it?
Student: Yes.

Prof: So who created evil?
Student: Silent.

Prof: Is there sickness, Immorality, Hatred, Ugliness? All these terrible things exist in the world,
don’t they?
Student: Yes, sir.

Prof: So, who created them?
Student: Silent.

Prof: Science says you have 5 senses you use to identify and observe the world around you. Tell
me, son...Have you ever seen God?
Student: No, sir.

Prof: Tell us if you have ever heard your God?
Student: No, sir.

Prof: Have you ever felt your God, tasted your God, smelt your God? Have you ever had any sensory
perception of God for that matter?
Student: No, sir. I’m afraid I haven’t.

Prof: Yet you still believe in Him?
Student: Yes.

Prof: According to empirical, testable, demonstrable protocol, science says your GOD doesn’t exist. What do you say to that, son?
Student: Nothing. I only have my faith.


Prof: Yes. Faith. And that is the problem science has.
Student: Professor, is there such a thing as heat?
Prof: Yes.

Student: And is there such a thing as cold?
Prof: Yes.

Student: No sir. There isn’t. (The lecture theatre becomes very quiet with this turn of events.)

Student: Sir, you can have lots of heat, even more heat, superheat, mega heat, white heat, a little heat or no heat. But we don’t have anything called cold. We can hit 458 degrees below zero which is no heat, but we can’t go any further after that. There is no such thing as cold. 

Cold is only a word we use to describe the absence of heat. We cannot measure cold. Heat is energy. Cold is not the opposite of heat, sir, just the absence of it. (There is pin-drop silence in the lecture theatre.)


Student: What about darkness, Professor? Is there such a thing as darkness?
Prof: Yes. What is night if there isn’t darkness?

Student: You’re wrong again, sir. Darkness is the absence of something. You can have low light,
normal light, bright light, flashing light... But if you have no light constantly, you have nothing
and its called darkness, isn’t it? In reality, darkness isn’t. If it were you would be able to make
darkness darker, wouldn’t you?

Prof: So what is the point you are making, young man?

Student: Sir, my point is your philosophical premise is flawed.
Prof: Flawed? Can you explain how?

Student: Sir, you are working on the premise of duality. You argue there is life and then there is
death, a good God and a bad God. You are viewing the concept of God as something finite, something
we can measure. Sir, science can’t even explain a thought. It uses electricity and magnetism,
but has never seen, much less fully understood, either one. To view death as the opposite of life is to be ignorant of the fact that death cannot exist as a substantive thing. 

Death is not the opposite of life: just the absence of it.
Now tell me, Professor. Do you teach your students that they evolved from a monkey?

Prof: If you are referring to the natural evolutionary process, yes, of course, I do.


Student: Have you ever observed evolution with your own eyes, sir? (The Professor shakes his
head with a smile, beginning to realize where the argument is going.)

Student: Since no one has ever observed the process of evolution at work and cannot even prove
that this process is an on-going endeavor, are you not teaching your opinion, sir? Are you not a
scientist but a preacher? (The class is in uproar.)

Student: Is there anyone in the class who has ever seen the Professor’s brain? (The class breaks
out into laughter!)

Student: Is there anyone here who has ever heard the Professor’s brain, felt it, touched or smelt
it? No one appears to have done so. So, according to the established rules of empirical, stable,
demonstrable protocol, science says that you have no brain, sir. With all due respect, sir, how do
we then trust your lectures, sir? (The room is silent. The professor stares at the student, his face
unfathomable.)

Prof: I guess you’ll have to take them on faith, son.
Student: That is it sir... The link between man and God is FAITH. That is all that keeps things
moving and alive.




اگست 25, 2010




Way to Salvation in Surah al Asr (Rah e Nijaat)

By 

Dr ISrar Ahmed


 DOWNLOAD

LINK-2

Rah e nijaat surah al asr ki roshani main


Blackwater: Dajjal ka Lashkar




Blackwater: Dajjal ka Lashkar
by Maulana Asim Umer 
Download Links
 


Dajjal ka lashkar
molana asim umer



Tesri Jang-E-Azeem ore Dajjal by Maulana-Asim-Umer





تیسری جنگ عظیم اور دجال ازمولانا عاصم عمر
Tesri Jang-e-Azeem ore Dajjal by Maulana-Asim-Umer

Download Links 

Direct Download (right click + save link as)

Alternate downloads

Link-1

LINK-2


tesri jang e azeem ore dajjal moulana asim umer



Imam Mehdi k Dost our Dushman







Imam Mehdi k Dost our Dushman 
By
Molana Asim Umar




Bermuda Tikon aur Dajjal






برمودا تکون اور دجال از مولانا عاصم عمر 
Bermuda Tikon aur Dajjal
By
Maulana Asim Umer

Download links ڈائونلوڈ

Direct Download (right click+ save link as)

Alternate links

LINK-1

LINK-2
  bermoda tikon ore dajjal



اگست 20, 2010

زاویہ part 1





زاویہ اشفاق احمد
Zavia by ishfaq ahmed part 1


DOWNLOAD

LINK-2
 

DESCRIPTION
Ashfaq Ahmed, who recently passed away, authored more than 20 books in Urdu. His works included novels, short stories and plays for television and radio. The government awarded Ashfaq Ahmed the Sitara-e-Imtiaz - the highest civilian award - in recognition of his contribution to Urdu literature.

Inspired by Ashfaq Ahmed's PTV Forum 'Zavia', in this book Ashfaq Ahmed, who wrote thought-provoking plays on social issues and was a great social reformer, using his vast knowledge of science, sprituality & different religions, has dwelt upon topics such as 'Mayoosi (depression)', 'Insaan Ko Sharminda Na Kiya Jai', 'Dosti Aur Tash Kay Game', 'We don't live in the present but in the future and in the past' & many others. 



اگست 15, 2010

پارلیمانی مجرے



Parlimani Mujrey
پارلیمانی مجرے 
by Dr Akhter Nawaz Khan

DOWNLOAD

LINK-2

muhafizon k roop pe asmaton k lutairay.
shurafa ki jinsi dehshatgardion ki benazir FIR
pakistani siyasat danon ki haqiqat.





College Loans Consolidation
Endowment Policy Sales
San Francisco Auto Accident Attorneys
Missouri Mesothelioma Lawyers

اگست 14, 2010


بسم اللہ الرحمن الرحیم

عزیز ساتھیو آج 14 اگست ہے یہ وہروز سعید ہے کہ جس روز مسلمانان ہند کی ایک صدی پر محیط کاوشیں اور قربانیاں رنگ لائیں اور ہم اس قطعہ ۓ زمین کو حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے
پاکستان : اس ریاست کا یہ نام چوہدری رحمت علی نے اگرچہ بہت بعد میں تجویز کیا مگر اس ریاست کے خدوخال سندھ کی اس ریاست میں 900 سال پہلے نظر آگئے تھے جسے سترہ سالہ محمد بن قاسم نے ایک مسلم دوشیزہ کی عصمت کی حفاظت کے لئے ایک سرکش راجہ کو شکست فاش دینے کے بعد قائم کیا تھا
اس ریاست کی بنیاد تو اسی دن رکھ دی گئی تھی جس دن برصغیر میں پہلا شخص مسلمان ہوا تھا 

اس ریاست کے قیام کا مقصد علاقائی حدود کی حفاظت نہیں بلکہ نظریاتی حدود کی حفاظت تھا جس کی حفاظت مسلمانان ہند کا مقصد اولین اور ان کی ضرورت تھی ۔
اس لئے کہ دینی سماجی معاشی ثقافتی تمدنی سیاسی بنیادوں پر مسلمانوں کا ایک الگ قومی تشخص ہے ۔

1:ہندوں کی گاو ماتا ہے جب کہ مسلمانوں کا ذبیحہ
2: ہندوں کی چٹیا ہے جب کہ مسلمانوں کا ختنہ
3: ہندوں کے مندر کا ناقوس جبکہ مسلمانوں کی مسجد کی اذان
ہندوں کی چھوت چھات جب کہ مسلمانوں کی اخوت و مساوات غرضیکہ کہیں بھی میل ملاپ کی گنجائش نہ تھی نہ ہے اور نہ ہو گی ۔
پاکستان کو حاصل کرنے کا مقصد ایک ایسی آزاد ریاست کا قیام تھا جس میں رب ذوالجلال کی حاکمیت کے سائے تلے مسلمان دین متین کے سنہری اصولوں کے مطابق اپنی زندگیاں گزار سکیں ۔
سیالکوٹ کے اصغر سودائی نے اس تمام مقصد کو اپنی تمام جامعیت کے ساتھ اس نعرہ میں سمو دیا اور یہی نعرہ برصغیر میں بسنے والے ہر مسلمان کا نعرہ بن گیا ۔
پاکستان کا مطلب کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لا الہ الا اللہ
پاکستان کا مطلب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لا الہ الا اللہ
پاکستان کیا ہے مختصر اور جامع تعریف یوں ہو سکتی ہے کہ
1: پاکستان 1857ئ کی جنگ آزادی کی تکمیل کی طرف ایک مثبت قدم ہے
2: سر سید احمد خان کی علمی تحریک علی گڑھ کا منطقی ارتقاء ہے ۔
3: علامہ اقبال کے خواب کی تعبیر جو انہوں نے خطبہ الا آباد میں پیش کیا۔
4: مسلمانوں کی بے پناہ قربانیوں کا ثمر
5: قائداعظم کی بے لوث ،بے لاگ ،بے بل ،بے خوف ،ایماندارانہ اور مدبرانہ قیادت کا ثمر ہے ۔
اس ریاست کے حصول کے لئے مسلمانان ہند نے بہت قربانیاں دیں ۔
کتنے لوگ تہہ تیغ ہوئے ؟ کتنی عصمتیں لٹیں ؟کتنے معصوم بچے مارے گئے؟
اس سوال کا جواب تاریخ دان دینے سے قاصر ہیں اس کا جواب صرف پاکستان کی بنیادوں میں محفوظ ہے ۔

کسی بہن کی عصمت تو کسی ماں کی عفت کسی معصوم کی جان تو کسی سہاگن کا جہان کسی ماں کا سپوت تو کسی باپ کا لاڈلہ پوت
یہ سب پاکستان کے نام ہو گئے اس لئے کہ پاکستان کا قیام ایک مقصد تھا ایک ضرورت تھی
مسلم کی آن ، مسلم کی شان ،مسلم ی جان ،مسلم کی پہچان پاکستان۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاکستان
اسی لئے مسلمانان ہند نے اپنا سب کچھ داو پر لگا دیا اپنا تن ،من ، دھن اس اسلامی جمہوریہ پر وار کر پھینک دیا ۔پاکستان کے قیام ،اسلام کی سربلندی کے لئے انہیں خون کا دریا پار کرنا پڑا ۔
جب 15 اگست کو بھارت پر آزادی کی دیوی کا نزول ہوا تو امرتسر نے اس روز سعید کو عجب طور منایا کہ آسمان و زمین تھرا اٹھے ۔

جان کونیل نے اپنی کتاب آکنلیک میں لکھا ہے کہ اس روز سکھوں کے ایک ہجوم نے مسلمان عورتوں کو برہنہ کر کے ان کا جلوس نکالا یہ جلوس شہر کے گلی کوچوں میں گھومتا رہا پھر سارے جلوس کی عصمت دری کی گئی اس کے بعد کچھ عورتوں کو کرپانوں سے ذبح کر دیا گیا باقی ککی عورتوں کو زندہ جلا دیا گیا ۔نعرے لگے واہ گرو کا خالصہ ۔واہ گرو کی فتح
نہیں بلکہ وہ فتح تو ان ماوں بیٹیوں کی تھی جو پاکستان کے نام قربان ہو کر امر ہو گئیں آج کا دن ان کی قربانیوں کو یاد کرنے کا دن ہے ان کی عظمتوں کو سلام کرنے کا دن ہے آج کا دن ہم سے بار بار یہ سوال کرتا ہے

تھے وہ آباء تو تمہارے ہی مگر تم کیا ہو؟
ہاتھ پر ہاتھ دھرے منتظر فردا ہو

یہ دن ہمیں ایک عہد کی یاد دلاتا ہے  
کہ
خون دل دے کے نکھاریں گے رخ برگ گلا ب
ہم نے گلشن کے تحفظ کی قسم کھائی ہے

والسلام
پاکستان پائندہ باد

اگست 10, 2010

Allah se tahaluq

Allah se tahalaq by orya amqbol jan
What american soldiers go through in Afghanistan
Why American soldiers are committing suicides.
Aise Qoum ko koe shikast nahe de sakta.
America buri tarah haar raha hai afghanistan main.
America is loosing war in Afghanistan

اگست 9, 2010

نجات کی راہ سورۃ العصر کی روشنی میں



Way to Salvation in Surah al Asr (Rah e Nijaat)

نجات کی راہ سورۃ العصر کی روشنی میں

By 

Dr Israr Ahmed

  ڈاکٹر اسرار احمد


DOWNLOAD

LINK-2

آخرت کے عزاب سے نجات کے متعلق سورۃ العصر کی روشنی میں لکھی گئی ایک اچھی تصنیف

 

الحمد للہ والصلاۃ والسلام علی رسول اللہ وبعد:

بِسْمِ اللَّہِ الرَّحْمَنِ الرَّحِیمِ
﴿ وَالْعَصْرِ ٭ إِنَّ الْإِنْسَانَ لَفِی خُسْرٍ ٭ إِلَّا الَّذِینَ آَمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ وَتَوَاصَوْا بِالْحَقِّ وَتَوَاصَوْا بِالصَّبْرِ ﴾ ( العصر)
قسم ہے زمانے کی ٭ یقینا انسان خسارے میں ہے ٭ سوائے اُن لوگوں کے جو ایمان لائے اور نیک عمل کرتے رہے اور باہم ایک دوسرے کو حق کی نصیحت کرتے رہے ، اور ایک دوسرے کو صبر کی تلقین کرتے رہے ۔



سورۃ العصرقرآن مجید کی مختصر سورتوں میں سے ہے ، اور خوش قسمتی سے اس میں جو الفاظ استعمال ہوئے ہیں ، وہ سب أردو میں عام طور پر استعمال ہوتے ہیں أو اور ایک عام اردو دان بھی ان سے بہت حد تک مانوس ہو سکتا ہے ، یہی وجہ سے کہ اس کا سرسری مفہوم تقریباً ہر شخص سمجھ جاتا ہے اور اس میں کسی قسم کی دِقَّت محسوس نہیں کرتا لیکن اس سورت کا اگر غور وفکر ، تدبراور شوق دلی سے مطالعہ کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ یہ سورت پورے قرآن کریم کی تعلیمات کا خلاصہ ہے ، اور اس کی ظاہری سادگی او رسلاست کے پردوں میں علم وحکمت کے کتنے خزا نے پوشیدہ ہے ۔

سورۃ العصر کے بارے میں چند بنیادی باتیں

قارئین کرام ! اس عظیم ترین سورت کی چند بنیادی باتیں ذہن نشین کر لیجئے ۔
۱۔ یہ سورت مبارکہ ترتیب نزولی کے اعتبار سے قرآن کریم کی اوّلین سورتوں میں سے ہے ، گویا کہ یہ نبی ا کرم ﷺپر مکی دور کے بالکل آغاز میں نازل ہوئی۔
۲۔ دوسری بات یہ ہے کہ یہ قرآن مجید کی مختصر سورتوں میں سے ایک ہے ، اس لئے کہ یہ کل تین آیات پر مشتمل ہے اور ان میں سے بھی پہلی آیت صرف ایک لفظ پر مشتمل ہے یعنی والعصر ۔

۳۔ تیسری بات یہ کہ اپنے مضمون اور مفہوم ومعنی کے اعتبار سے قرآن حکیم کی جامع ترین سورت ہے ، اس لئے کہ قرآن مجید کتاب ہدایت ہے ﴿ہُدًی لِنَّاسِ﴾ یعنی انسان کو کامیابی اور فوز وفلاح کا راستہ دکھانے کیلئے نازل کیا گیا ہے تاکہ انسان نجات حاصل کرسکے اور واقعہ یہ ہے کہ قرآن حکیم نجات کی جس راہ کی جانب لوگوں کی رہنمائی کرتا ہے وہ نہایت اختصار لیکن حد درجہ جامعین کے ساتھ اس چھوٹی سی سورت میں بیان ہوگئی ہے ، اس اعتبار سے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ سورۃ العصر میں پورا قرآن کریم موجود ہے ۔

۴۔ چوتھی بات یہ کہ اس سورت کے الفاظ بہت سادہ اور آسان ہیں ، آپ کو معلوم ہے کہ ہر زبان میں اس کے ادب کے شاہکار وہ ادب پارے کہلاتے ہیں جن میں مضامین اور معانی تو بہت اعلیٰ اور بلند پایہ ہوں لیکن الفاظ نہایت آسان اور عام فہم ہوں ایسے ہی ادب پاروں کو سہل ممتنع قرار دیا جاتا ہے ۔ اوّل تو قرآن مجید پورا ہی عربی زبان کا اعلیٰ ترین ادبی شاہکار ہے ، اور کل کا کل سہل ممتنع ہے ، لیکن اس میں بھی خاص طور پر یہ سورت سہل ممتنع کی اعلیٰ ترین مثال ہے ، جس میں مضامین کے اعتبار سے تو گویا دریا کو کوزے میں بند کر دیا گیا ہے لیکن ثقیل اور بھاری لفظ ایک بھی استعمال نہیں ہوا۔

والعصر کا مفہوم

قارئین کرام! سب سے پہلے لفظ والعصر کو سمجھئے جس کا سادہ ترجمہ میں نے ابھی زمانے کی قسم کیا ہے ۔
عصر کا اصل مفہوم صرف زمانہ نہیں بلکہ تیزی سے گزرنے والا زمانہ ہے ، عربی زبان میں عصر اور دہر کے دوالفاظ بہت جامع ہیں ، اور ان دونوں میں صرف زمان (Time) نہیں بلکہ زمان اور مکان کے مرکب کی جانب اشارہ ہے ۔اور حسن اتفاق سے قرآن مجید میں العصر اور الدہر دونوں ہی ناموں کی سورتیں موجود ہیں ۔ ان دونوں میں فرق یہ ہے کہ دہر میں مرکب زمان ومکان کی وسعت کا لحاظ ہے یا جدید فلسفے کی اصطلاح میں یوں کہہ لیجئے کہ زمان مطلق مراد ہے ، جبکہ لفظ عصر میں زمانہ مراد اور اس کی تیزروی کی جانب اشارہ ہے ، گویا فلسفی اصطلاح میں زمان جاری یا زمان مسلسل (Serial time) مراد ہے ۔ والعصر میں حرف واو حرف جار ہے اور اس کا مفاد قسم کا ہوتا ہے ، اور قسم سے اصل مراد شہادت اور گواہی ہے ، گویا لفظ والعصر کا حقیقی مفہوم یہ ہوا کہ تیزی سے گزرتا ہوا زمانہ شاید ہے اور گواہی دے رہا ہے ۔

خُسران کا مفہوم
اسی طرح دوسری آیت کا سادہ ترجمہ بھی میں کرآیا ہوں کہ انسان خسارے میں ہے ، لیکن اس سے بھی اصل مفہوم ادا نہیں ہوتا، اس لیے کہ قرآن کی اصطلاح میں دو چار ہزار یا دو چار لاکھ کے گھاٹے کو نہیں بلکہ کامل تباہی اور بربادی کو کہتے ہیں ، چنانچہ کامیابی اور بامرادی کیلئے تو قرآن حکیم میں متعدد الفاظ استعمال ہوئے ہیں ، جیسے فوز و فلاح، اور رشد وہدایت لیکن ان سب کی کامل ضد حیثیت سے ایک ہی لفظ استعمال ہوتا ہے اور وہ ہے خُسران، گویا دوسری آیات کا اصل مفہوم یہ ہوا کہ پوری نوع انسانی تباہی اور ہلاکت وبربادی
سے دوچار ہونے والی ہے ۔

پہلی دو آیتوں کا باہمی ربط
یہ بات تو واضح ہے کہ پہلی آیت قسم پر مشتمل ہے اور دوسری جواب قسم پر یعنی دوسری آیت میں ایک حقیقت کا بیان ہے اور پہلی میں اس پر زمانے کی گواہی کی جانب اشارہ ہے تو سوال پیدا ہوتا ہے کہ ان دونوں کے مابین منطقی ربط کیا ہے ؟ غور کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ عصر یعنی زمان جاری یا زمان مسلسل ایک ایسی چادر کی مانند ہے جو ازل سے ابد تک تنی ہوئی ہے ، گویا زمانہ انسان کی تخلیق سے لیکر نہ صرف انسان کی حیات دنیوی اور اس کی پوری تاریخ بلکہ حیات اخروی اور اس کے جملہ مراحل کا چشم دیدگواہ ہے ۔ اس حقیقت ثابت پر ایک تنبیہ اور انداز کا مزید رنگ ہے جو لفظ والعصر کے استعمال سے پیدا ہوتا ہے اور وہ یہ کہ انسان کی ہلاکت اور تباہی اور خسران حقیقی کا اصل سبب یہ ہے کہ اس پر غفلت طاری ہوجاتی ہے اوروہ اپنے ماحول اور اپنے فوری مسائل ومعاملات میں الجھ کر گویا گمشدگی کی سی کیفیت سے دوچار ہوجاتا ہے ، اس حوالے سے شاعر نے کیا خوب کہا ہے کہ
کافر کی یہ پہچان کہ آفاق میں گم ہے

مومن کی یہ پہچان کہ گم اس میں آفاق
ایمان کا اصل مفہوم

اس خسران عظیم اور تباہی اور بربادی سے نجات کی شرط اول ایمان ہے ، ایمان کا لفظ امن سے بنا ہے اور اس کے لفظی دو معنی ہیں کسی کو امن دینا اور سکون بخشنا۔ لیکن اصطلاح کے معنی میں تصدیق کرنا اور یقین واعتماد کے لفظ بن جاتے ہیں ۔ایمان کی اصل حقیقت کو سمجھنے کے لئے ضروری ہے کہ پہلے آپ اس حقیقت پر غور کریں کہ ہر وہ انسان جو عقل اور شعور کی پختگی کو پہنچ جائے لازماً یہ سوچتا ہے کہ میں کون ہوں اور کہاں سے آیا ہوں اور کائنات کیا ہے اور اس کی ابتداء اور انتہاء کیا ہے اور خود میرے سفر زندگی کی آخری منزل کون سی ہے لیکن آج بنی آدم ایسی تاریکی میں گم ہے کہ اپنی منزل مقصود اور اپنے مقصد حیات سے ناآشنا ہے ، اور نہ اپنے آغاز وانجام کی خبر اسے حاصل ہے نہ کائنات کی ابتداء وانتہاء کا علم۔

نہ ابتداء کی خبر ہے نہ انتہامعلوم

رہا یہ وہم کہ ہم ہیں سویہ بھی کیا معلوم

عمل صالح کا مفہوم

قارئین کرام! عمل صالح کا عام ترجمہ آپ بھی باآسانی کرسکتے ہیں لیکن خود اس کی گہرائیوں میں اتر کر دیکھئے تو مزید حقائق سے پردہ اٹھتا ہے ، اس لئے کہ ایک طرف تو اس کے باوجود کہ عمل اور فعل دو نہایت قریب المفہوم الفاظ ہیں ، ان کے معنی میں ایک باریک سا فرق ہے ، اور وہ یہ کہ فعل کسی بھی کام کو کہہ دیں گے ، لیکن عمل کا اطلاق عام طور پر محنت طلب اور مشقت بخش کام پرہوتا ہے ، اوردوسری طرف صالح کا اطلاق ہر اس چیز پرہوتا ہے جس میں ترقی نشو ونما کی صلاحیت موجود ہو ، انسان کو عمل صالح کی صلاحیت کی وجہ سے فرشتوں پر بھی فضیلت حاصل ہے کیونکہ اس میں انسان کو مشقت ومحنت کا مظاہرہ کرنا پڑ تا ہے ، اعمال صالحہ اختیار کرنے کا مقصدہے کہ شریعت کی را ہوں پر گامزن ہونا چنانچہ یہی انسان کی نجات (Salvation) ہے ۔


تواصی کے معنی

سورۃ العصر کے آخری حصہ میں دوبار جو لفظ تواصوا آیاہ ے اس کا مصدر تواصی ہے اور یہ وصیت سے بنا ہے جس کے معنی ہیں تاکید اور مدد کے ساتھ کسی بات کی تلقین ونصیحت پھر یہ مصدر باب تفاعل سے ہے ، جس کے خواص میں ایک تو باہمی اشتراک ہے اور دوسرے شدت ومبالغہ اس کا مطلب یہ ہوا کہ ایک تو یہ عمل تواصی پورے زور وشور اور پوری قوت وشدت کے ساتھ مطلوب ہے اور دوسرے اس مرحلے پر ایک اجتماعیت کا قیام ناگزیر ہوجاتا ہے جو باہم ایک دوسرے کو حق اور صبر کی تلقین کے اصول پر مبنی ہو۔


حق کے معنی

لفظ حق معنی ومفہوم کے اعتبار سے بہت وسیع ہے اور اس کا اطلاق ہر اس چیز پرہوتا ہے جو واقعی ہو(یعنی صرف خیالی نہ ہو) یا عقل کے نزدیک مُسلّم ہو یا اخلاقاً واجب ہو یا بامقصد اور غرض وغایت کی حاصل ہو (یعنی بیکار نہ ہو) تو معلوم ہوا کہ تواصی بالحق کے معنی ہوں گے ہر اس بات کا اقرار واعلان اور ہر اس چیز کی دعوت وتلقین جو واقعی اور حقیقی ہو عقلاً ثابت ہو یا اخلاقاً واجب ہو ، گویا حق کے دائرے میں چھوٹی سے چھوٹی صداقت سے لیکر کائنات کے بڑ ے بڑ ے حقائق وحقوق سب داخل ہوں گے اور تواصی بالحق کے ذیل میں چھوٹی سے چھوٹی اخلاقی نصیحتوں سے لیکر اس سب سے بڑ ے حق کا اعلان بھی شامل ہو گیا کہ اس کائنات کا مالک حقیقی صرف اللہ تعالیٰ ہے اور صرف اس کو حق پہنچاہے کہ دنیا میں اس کا حکم چلے اور اسی کا قانون نافذ ہو پھر یہ کہ اس حق کا صرف اعتراف نہ ہو بلکہ اس کی عملی تنفیذ کیلئے جدوجہد کی جائے ۔


صبر کا مفہوم

قارئین کرام! صبر کا مفہوم بہت وسعت کا حامل ہے اور اس کا اصل ماحصل یہ ہے کہ انسان اپنے طے کردہ راستے پر گامزن رہے اور اس سے اسے نہ کوئی تکلیف یا

مصیبت ہٹا سکے نہ لالچ وحرص ، گویا اسے راہ سے نہ تو کسی قسم کے تشدد سے ہٹایا جا سکے نہ کسی طرح کے طمع اور لالچ سے بلکہ وہ ہر صورت میں ثابت قدم اور پختہ ارادے والا ثابت ہو ، اور استقلال اور پامردی سے حق پر خود بھی قائم رہے اور دوسروں کو بھی اس کی دعوت دیتا چلا جائے ۔

سورۃ العصر سے متعلق صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجعین کا طرز عمل

ابو مزینہ دارمی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ نبی ا کرم ﷺ کے صحابہ میں سے دو حضرات اس وقت تک ایک دوسرے سے جدا نہ ہوتے جب تک ان میں سے ایک دوسرے کو سورۃ العصر نہ سنا لیتا اس کے بعد ہی ان میں سے ایک دوسرے کو الوداعی سلام کہتا۔ (اخرجہ الطبرانی فی الأوسط ، والبیہقی فی شعب الإیمان)


سورۃ العصر کے بارے میں امام شافعی رحمہ اللہ کے دو حکیمانہ اقوال

۱۔ لو تدبر الناسُ ہذہ السورۃ لوسعتہم ۔

اگر لوگ اس سورۃ پر غور کریں تو وہ اسی میں پوری رہنمائی اور کامل ہدایت پالیں گے ۔ (تفسیرابن کثیر)
۲۔ لَومَا اَنزَلَ اللّٰہُ حُجَّۃً عَلَی خَلقِہِ إِلاَّ ہٰذِہِ السُّورَۃَ لَکَفَتہُم (بحوالہ : تفسیر ابن کثیر، والاصول الثلاثۃ :شیخ الاسلام محمد بن عبد الوہاب رحمہ اللہ)
اگر قرآن حکیم میں سوائے اس سورۃ مبارکہ کے اور کچھ بھی نازل نہ ہوتا تو صرف یہ سورۃ ہی لوگوں کی ہدایت ورہنمائی کیلئے کافی ہوتی۔

قارئین کرام!ذرا غور کیجئے کہ ہمارے پاس قرآن جیسی نعمت ہونے کے باوجودآج ہم رسوا کیوں ہیں ؟ ہم کیوں دن بدن پستی کی طرف گامزن ہیں ؟ کیونکہ آج ہم قرآن کو اپنے گھروں میں سجا کر رکھ تو دیتے ہیں ، اسے عقیدت سے چوم تو لیتے ہیں لیکن اسے پڑ ھنے اور سمجھنے سے راہ فرار اختیار کرتے ہیں ، اس لیے آج ہم پستی کی طرف بڑ ھتے چلے جا رہے ہیں ۔

قارئین کرام! قرآن مجید کی عظمت دیکھئے ۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں :﴿لَوْ أَنْزَلْنَا ہَذَا الْقُرْآَنَ عَلَی جَبَلٍ لَرَأَیْتَہُ خَاشِعًا مُتَصَدِّعًا مِنْ خَشْیَۃِ اللَّہِ وَتِلْکَ الْأَمْثَالُ نَضْرِبُہَا لِلنَّاسِ لَعَلَّہُمْ یَتَفَکَّرُونَ﴾ (سورۃ الحشر:۲۱)

اگر ہم اس قرآن کو کسی پہاڑ پر اتار دیتے تو آپ اس سے (اللہ کے حضور) جھکا ہوا اور اس کے خوف سے ریزا ریزا ہوا دیکھتے ، اور ہم یہ مثالیں انسانوں کیلئے اس لیے بیان کرتے ہیں تاکہ وہ غور وفکر کریں ۔

قارئین کرام! ذرا غور کیجئے کہ پہاڑ جیسی سخت ماندہ مخلوق اللہ کے کلام سے ریزا ریزا ہو سکتی ہے ، لیکن آج ہمارا حال دیکھئے کہ دن رات قرآن کو سنتے تو ہیں لیکن آنکھوں سے دو قطرے آنسوں باہر نہیں آتے ۔ کیونکہ آج ہم اسلامی تعلیمات سے دور ہوگئے ہیں اور آج ہمارے آئیڈیل صحابہ کرام رضی اللہ عنہم أجمعین کو چھوڑ کر فلمی اداکار (Actors) اور کھیلوں کے کھلاڑ ی بن چکے ہیں اور دنیا کی طمع نے ہمیں راستے سے بھٹکا دیا اوراندھا کر دیا ہے آج بھی دیر نہیں ہوئی ہے ابھی ہماری آنکھیں کھلی ہیں آئیے آج ہی قرآن کریم کو سیکھنا اور سمجھنا شروع کریں ، اور اس پر عمل کریں اور اللہ کی بارگاہ میں سرخرو ہونے کی کوشش کریں ۔

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہمیں قرآن مجید باغور ودقت سے مطالعہ کرنے کی توفیق عطا فرمائے جیسا ہمارے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین اور ہمارے سلف صالحین رحمہم اللہ کیا کرتے تھے ۔ آمین

وصلی اللہ علی نبینا محمد وعلی آلہ وصحبہ أجمعین

راہ نجات سورۃ العصر کی روشنی میں
rah e nijaat, nijaat ki raah, dr israr ahmed, download free,
way of salvation.