ٹیپو سلطان کا سفر آخرت

وہ عالمِ تصور میں میسور کے شیر کو ایک خوفناک دھاڑ کے ساتھ اپنے پرحملہ آور ہوتا دیکھ کر چونک جاتا تھا‘ اسکی سپاہ سرنگا پٹم کے میدان میں جمع ہونے والے سپاہیان اسلام کی نعشوں میں میسور کے شیر کو تلاش کر رہے تھے

مسلمانوں کے ملک میں پرندے بھوک سے نا مر جائیں

زیر نظر تصویر ترکی کی ہے جہاں ایک بہت پرانی اسلامی روایت ابھی تک زندہ ہے کہ جب سردی کا عروج ہو اور پہاڑوں پر برف پڑ جائے تو یہ لوگ چوٹیوں پر چڑھ کر اس وقت تک دانہ پھیلاتے رہتے ہیں جب تک برفباری ہوتی رہے۔ اور یہ اس لیئے ہے کہ پرندے اس موسم میں کہیں بھوک سے نا مر جائیں۔

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔

داستان ایک متکبر کی

سبحان الله ! یہ تھا اسلام کا انصاف

میں اپنا ثواب نہیں بیچوں گا

عموریہ کی جنگ میں پیش آنے والا ایک دلچسپ واقعہ

اگست 13, 2012

کس سے منصفی چاہیں؟




معروف صحافی انصار عباسی کا کالم، جو جنگ گروپ نے شائع کرنے سے انکار دیا۔۔۔
پیمرا، کیبل اپریٹرز اور میڈیا مالکان نے فحش مواد چلانے کا عزم کر دیا
شئیر کریں تاکہ حق کی آواز ہر جگہ پہنچ سکے



Source

2 comments:

  1. janab abbasi saib ny sahaft ki ahla aqdar par mabni column main aik aisa aaina dikhaya k bury logon ko apna hi chehra bura lagne laga a,
    main abbassi saib ki is behtreen kawish par inhain khoob dad daita hoon,
    thanks
    syed mehtab shah
    tv actor

    جواب دیںحذف کریں

  2. abbasi sb hmain in sara masail ka ilawa apni nojwan nsal ki ziada fikr karni chahia jo is fahashi sa mutasr ho kr sari iqdar ka jnaza nikal chuka hain; burhaa man baap rota hain keh bati job sa vapis nahin aai; khan chali gai; aur hero aik kangla maflookulhaal hota hajo 10 din bhi heroin ko nhin rakh sakta; sirf aik mobile us ka sarmaia ha.aap ko is ka baad ka btana ki zaroorat nahin.khuda ka lia kuch krain varna allah ka haan sa pakar to aani ha sb ki; journalists ki;haakmon ki;valdain ki; ulma ki bachon ki hamari.

    جواب دیںحذف کریں