ٹیپو سلطان کا سفر آخرت

وہ عالمِ تصور میں میسور کے شیر کو ایک خوفناک دھاڑ کے ساتھ اپنے پرحملہ آور ہوتا دیکھ کر چونک جاتا تھا‘ اسکی سپاہ سرنگا پٹم کے میدان میں جمع ہونے والے سپاہیان اسلام کی نعشوں میں میسور کے شیر کو تلاش کر رہے تھے

مسلمانوں کے ملک میں پرندے بھوک سے نا مر جائیں

زیر نظر تصویر ترکی کی ہے جہاں ایک بہت پرانی اسلامی روایت ابھی تک زندہ ہے کہ جب سردی کا عروج ہو اور پہاڑوں پر برف پڑ جائے تو یہ لوگ چوٹیوں پر چڑھ کر اس وقت تک دانہ پھیلاتے رہتے ہیں جب تک برفباری ہوتی رہے۔ اور یہ اس لیئے ہے کہ پرندے اس موسم میں کہیں بھوک سے نا مر جائیں۔

پاپا نے پادری بنانا چاہا ۔۔۔مگر۔۔۔؟

میں اپنے کسی کام کے سلسلہ میں ’’تیونس‘‘ گیا۔ میں اپنے یونیورسٹی کے دوستوں کے ساتھ یہاں کے ایک گاؤں میں تھا۔ وہاں ہم دوست اکٹھے کھا پی رہے تھے۔ گپ شپ لگا رہے تھے کہ اچانک اذان کی آواز بلند ہوئی اللہ اکبر اللہ اکبر۔۔۔

داستان ایک متکبر کی

سبحان الله ! یہ تھا اسلام کا انصاف

میں اپنا ثواب نہیں بیچوں گا

عموریہ کی جنگ میں پیش آنے والا ایک دلچسپ واقعہ

20 مارچ، 2012

اقبال کی شاعری کو بین کردینا چاہئے


یہ عطا الحق قاسمی صاحب کا ایک فکر انگیز کالم ہے جو تھوڑی سی تبدیلی و توسیع کے بعد پیش خدمت ہے.
اس کالم کا انگریزی ترجمہ یہاں پڑھ سکتے ہیں 

اقبال کی شاعری کو بین کردینا چاہئے
میں اگرچہ اقبال کی صناعی کا بہت قائل ہوں تاہم میری ذاتی رائے یہ ہے کہ اقبال کی شاعری کو بین کردینا چاہئے، اللہ کا شکر ہے کہ اس کی شاعری کا کچھ حصہ تو پہلے ہی سے چھپا کر رکھا گیا ہے اور کوشش کی جاتی ہے کہ اسے ہوا نہ لگنے پائے۔ مثلاً

اٹھو میری دنیا کے غریبوں کو جگادو
کاخ امراء کے در و دیوار ہلا دو

جبکہ دوسری طرف ہمارے حاکم اور ہمارے سیاستدان جلسے جلوسوں میں
 
ایک ولولہ تازہ دیا تونے دلوں کو

والا شعر پورے تواتر سے استعمال کرتے ہیں اور عوام کو سمجھاتے ہیں کہ اقبال نے یہ شعر ان کی قیادت کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے کہا ہے مگر میں نے کسی سیاستدان اور کسی حاکم کی زبان سے اقبال کا یہ شعر

جس کھیت سے دہقاں کو میسر نہ ہو روزی
اس کھیت کے ہر خوشہٴ گندم کو جلا دو

کبھی نہیں سنا اور یہ بہت اچھی بات ہے کیونکہ اگر پاکستان کے غریب جاگ اٹھے تو وہ کاخ امراء کے درو دیوار ہلا دیں گے جس کھیت کی ساری کمائی جاگیردار لے جاتا ہے ،وہ اس کھیت کے ہر خوشہٴ گندم کو جلانے کی بات کریں گے اور یوں سرمایہ دارانہ جمہوریت جو ہماری بقاء کی ضامن ہے ،خواہ مخواہ عوامی جمہوریت کے ہتھے چڑھ جائے گی اور یوں ہمارا مراعات یافتہ طبقہ ان ٹکے ٹکے کے لوگوں کی نظر کرم کا محتاج ہو کر رہ جائے گا۔

مگر اقبال کے کلام کے صرف اس حصے کو عوام سے چھپا چھپا کر رکھنے سے کام نہیں بنے گا بلکہ ضروری ہے کہ اقبال کا سارا کلام دریا برد کردیا جائے کیونکہ ہم جس ڈھب پر اپنی زندگیاں گزار رہے ہیں اور یہ زندگیاں ہمیں بہت عزیز ہیں۔ اقبال اسے زندگی نہیں، موت قرار دیتا ہے اور یوں ہمارے جذبات کو ٹھیس پہنچاتا ہے، مثلاً ہم مطمئن ہیں اور اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں کہ اس نے ہمیں نہ صرف یہ کہ مسلمانوں کے گھرپیدا کیا بلکہ ہم اس کے دین کی پیروی کرتے ہوئے نماز، روزے میں کبھی غفلت نہیں برتتے لیکن اقبال اس کے باوجود ہمیں کچوکے دیتا رہتا ہے، وہ ہمارے ان نام نہاد ہی سہی مذہبی پیشواؤں کو بھی نہیں بخشتا جن کے ہم ہاتھ چومتے ہیں اور جنہوں نے ہمیں یقین دلا رکھا ہے کہ تم جتنی چاہو دنیا داری کرو، ہم تمہاری انگلی پکڑ کر اپنے ساتھ جنت میں لے جائیں گے اور داروغہ جنت بس منہ دیکھتا رہ جائے گا۔ اقبال کی ساری شاعری اس طرح کی باتوں سے بھری پڑی ہے ،مثلاً وہ کہتا ہے۔
 
رگوں میں وہ لہو باقی نہیں ہے
وہ دل وہ آرزو باقی نہیں ہے
نماز و روزہ و قربانی و حج
یہ سب باقی ہیں تو باقی نہیں ہے
==================
میں جانتا ہوں جماعت کا حشر کیا ہوگا
مسائل نظری میں الجھ گیا ہے خطیب
==================
کس کومعلوم ہے ہنگامہ فردا کا مقام
مسجد و مکتب و میخانہ ہیں مدت سے خموش
==================
دل ہے مسلماں تیرا نہ میرا
تو بھی نمازی ، میں بھی نمازی
میں جانتا ہوں انجام اس کا
جس معرکے میں ملا ہوں غازی
==================
تیرا امام بے حضور تیری نماز بے سرور
ایسی نماز سے گزر، ایسے امام سے گزر
==================
نہ فلسفی سے نہ ملا سے ہے غرض مجھ کو
یہ دل کی موت وہ اندیشہ نظر کا فساد
==================
رہا نہ حلقہ صوفی میں سوز مشتاقی
فسانہ ہائے کرامات رہ گئے باقی
کرے گی داور محشر کو شرمسار اک روز
کتاب صوفی و ملا کی سادہ اوراقی
==================

وغیرہ وغیرہ…اور یہ وغیرہ وغیرہ میں نے اس لئے کہا ہے کہ اقبال کے کلام میں اس طرح کے اور بہت سے کچوکے ہیں جن سے وہ ہمارے دلوں کو زخمی کرتا ہے، صرف یہی نہیں بلکہ اس کے بعد ہمیں اپنی ساری عبادات بے معنی لگنے لگتی ہیں کیونکہ اس کے نزدیک ہم عبادات کی اصل روح سے بے گانہ ہوچکے ہیں۔
 
میں اگر اقبال کے کلام کو بین کرنے کی بات کرتا ہوں تو اس کی صرف یہی ایک وجہ نہیں جو میں نے ابھی بیان کی ہے بلکہ اس کی اور بھی بے شمار وجوہات ہیں، جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں خدا کے فضل و کرم سے ہمارے حاکم خدا ترس ہیں۔ انہیں ہر لمحہ عوام کی فلاح و بہبود کی فکر رہتی ہے، وہ پاکستان کی خود مختاری کی حفاظت ہر قیمت پر کرتے ہیں ملک کو خوشحال بنانے کی خاطر غیر ملکی امداد کے لئے وہ ہر دروازے پر جاکر دستک دیتے ہیں مگر اقبال ان کی ان کاوشوں کو خاطر ہی میں نہیں لاتا اور کہتا ہے۔
 
نگاہ فقر میں شان سکندری کیا ہے
خراج کی جو گدا ہو وہ قیصری کیا ہے
بتوں سے تجھ کو امیدیں خدا سے نومیدی
مجھے بتا تو سہی اور کافری کیا ہے
فلک نے ان کو عطا کی ہے خواجگی کہ جنہیں
خبر نہیں روش بندہ پروری کیا ہے
کسے نہیں ہے تمنائے سروری لیکن
خودی کی موت ہو جس میں وہ سروری کیا ہے
خودی، خودی، خودی اقبال کی اس تکرار نے ہماری نیندیں حرام کی ہوئی ہیں، کیا خودی کے ذریعے عظیم الشان محلات کھڑے کئے جاسکتے ہیں، کیا خودی سے سوس اکاؤنٹس کا پیٹ بھرا جاسکتا ہے، کیا خودی سے اربوں کھربوں کے قرضے لئے جاسکتے ہیں، اقبال کی یہ سوچ ہماری قوم کے نوجوانوں کو گمراہ کررہی ہے اور ان کے دلوں میں ظل الٰہی کے خلاف باغیانہ خیالات جنم لینے لگتے ہیں ، لہٰذا اقبال کو بین کئے بغیر آنے والے حالات پر قابو نہیں پایا جاسکتا۔
 




اقبال کی شاعری صرف ہمارے لئے خطرہ نہیں ہے بلکہ دنیا بھر میں جن ملکوں کے عاقل و بالغ ذہنوں نے اپنی خداداد صلاحیت کے بل بوتے پر آدھی دنیا کے وسائل پر قبضہ کیا ہوا ہے اور وہاں ڈمی حکمران مسلط کرکے وہ من مانی کرتے ہیں اقبال کا کلام ان کے لئے بھی خطرے کی گھنٹی ہے، وہ قوموں کی آزادی کی بات کرتا ہے اور اس کے پیغام میں اتنی کشش ہے کہ بہت سے اسلامی ملکوں نے غلامی کی زنجیریں اتار پھینکی ہیں۔ وہ سرمایہ داری نظام کا بھی دشمن ہے۔ دنیا میں جہاں جہاں اس نظام کے خلاف بغاوت ہوگی اقبال کی شاعری ان کے ہم رکاب ہوگی، آج بہت سے سرمایہ دار ملکوں کے عوام اس نظام کے خلاف اٹھ کھڑے ہوئے ہیں۔ اقبال تو کئی مقامات پر اللہ تعالیٰ سے بھی الجھتا ہوا نظر آتا ہے، وہ جب دیکھتا ہے کہ یہ سیارہ جس میں ہم رہ رہے ہیں تباہی اور بربادی کی زد میں ہے، اللہ کی تخلیق یعنی انسان انسانیت کے مقام سے گرتا چلا جارہا ہے تو وہ خدا کو مخاطب کرکے کہتا ہے۔
 
اگر کج رو ہیں انجم آسماں تیرا ہے یا میرا؟
مجھے فکر جہاں کیوں ہو جہاں تیرا ہے یا میرا؟
اگر ہنگامہ ہائے شوق سے ہے لامکاں خالی
خطا کس کی ہے یارب لامکاں تیرا ہے یا میرا؟
اسی کو کب کی تابانی سے ہے تیرا جہاں روشن
زوال آدم خاکی زیاں تیرا ہے یا میرا؟

میں چونکہ شاعر نہیں، کالم لکھ رہا ہوں اور کالم کی بندشوں میں ایک بندش یہ بھی ہوتی ہے کہ یہ زیادہ طویل نہ ہو ،ورنہ میں آپ کو مزید دلائل سے اس امر کا قائل کرنے کی کوشش کرتا کہ دنیا میں امن اور پاکستان میں موجودہ نظام کو استحکام بخشنے کے لئے اقبال کی شاعری پر پابندی وقت کی اہم ضرورت ہے، مثلاً یہ شاعر یورپ کی ترقی کی ایک وجہ اس کی علم دوستی بھی بیان کرتا ہے، چنانچہ جب وہ اپنے بزرگوں کی کتابیں ان کی لائبریریوں میں دیکھتا ہے تو اس کا دل سی پارہ ہوجاتا ہے اور یوں یہ شاعر دنیا بھر کے مسلمانوں کو علم کے حوالے سے اپنے آباء کی پیروی پر مائل کرنے کی کوشش کرتا ہے تاکہ وہ ایک بار پھر دنیا کی امامت کرسکیں، دوسرے لفظوں میں وہ ہمیں جاہل کہتا ہے، ہمیں علم دشمن کہتا ہے اور اس چیز کو ہمارے زوال کا باعث قرار دیتا ہے۔ یہ سراسر ہماری توہین ہے اور یوں مسلم امہ کی توہین کرنے والے اس شاعر کو بین کرنا ضروری ہے۔ اسی طرح کئی ایک مقامات پر اقبال خدا کے حضور خواہ مخواہ انسان کا وکیل بن کر پیش ہوتا ہے اور اس کا مقدمہ خدا کی عدالت میں پیش کرتا ہے۔

باغ بہشت سے مجھے حکم سفر دیا تھا کیوں
کار جہاں دراز ہے اب میرا انتظار کر
روز حساب جب میرا پیش ہو دفتر عمل
آپ بھی شرمسار ہو مجھ کو بھی شرمسار کر

یا وہ کہتا ہے

فارغ تو نہ بیٹھے گا محشر میں جنوں میرا
یا اپنا گریباں چاک یا دامن یزداں چاک

خود اقبال کو بھی احساس ہے کہ وہ کیا کہہ رہا ہے چنانچہ وہ خود ہی کہتا ہے۔
 
”کرتا کوئی اس بندہ گستاخ کا منہ بند“

اب اس کے بعد مجھے کچھ مزید کہنے کی کیا ضرورت رہ جاتی ہے؟
اورآخر میں اقبال کی شاعری کو بیان کرنے کی چند وجوہات میں اسی کی زبان میں بیان کرکے آپ سے اجازت چاہتا ہوں۔
 
میری نوائے شوق سے شور حریم ذات میںغلغلہ ہائے الاماں بت کدہ صفات میں
حور و فرشتہ ہیں اسیر میرے تخیلات میں
میری نگاہ سے خلل تیری تجلیات میں
گرچہ ہے میری جستجو دیرو حرم کی نقشبند
میری فغاں سے رستخیز کعبہ و سومنات میں
گاہ میری نگاہ تیز چیر گئی دل وجود
گاہ الجھ کے رہ گئی میرے توہمات میں
تونے یہ کیا غضب کیا مجھ کو بھی فاش کردیا
میں ہی تو ایک راز تھا سینہ کائنات میں


 ربط 

توسیع

اقبال کی شاعری پر پابندی ہونی چاہئیے بلکہ اس کی ساری شاعری سمندر میں پھینک دینی چاہئیے. اقبال ہمیں سونے نہی دیتا، نیند میں خلل ڈالتا ہے
۔
ابھی چند صدیاں ہی تو ہوئی ہیں سوئے ہوئے اور اقبال کہتا ہے کہ

معمار حرم، باز بہ تعمیر جہاں خیز
از خواب گراں، خواب گراں، خواب گراں خیز

اے حرم کو تعمیر کرنے والے (مسلمان) تو ایک بار پھراس (تباہ و برباد) جہان کو تعمیر کرنے کیلیے اٹھ کھڑا ہو، (لیکن تُو تو خوابِ غفلت میں پڑا ہوا ہے) اٹھ، گہری نیند سے اٹھ، بہت گہری نیند سے اٹھ۔
۔

اب بتائیں یہ کوئی کرنے والی بات ہے؟


اور پھر اوپر سے اقبال مردار کھانے سے روکتا ہے. اور ساتھ یہ بھی کہتا ہے کہ
"اس رزق سے موت اچھی جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی"
یا پھر
لیلی بھی ہم نشیں ہو تو محمل نہ کر قبول


اقبال بہت کچوکے لگاتا ہے ہمیں
۔ 


ہم نے ویسے تو بہت کوشش کی اقبال کی شاعری کو بوسیدہ کرنے کی. اس کا بےدریغ استعمال کیا ہر جگہ. جعمہ کا خطبہ ہو یا سیاسی تقریر، ہمارے سیاستدان ہوں یا مولوی، علما، دانشور، فقیر یا جرنلسٹ، وکیل ہو یا جج، استاد ہو یا شاگرد .. کسی کی تقریر اقبال کے شعر کے بغیر مکمل نہی ہوتی.....اپنی اپنی مرضی کے مفہوم نکالنے اور اس کے شعروں کو گڈمڈ کرنے کی بہت کوشش کی.
حتیٰ کہ کلام اقبال کو ہم نے قوالیوں میں گا گا کر بوسیدہ کرنے کی کوشش کی. ٹیلی ویژن چینلوں پر اقبال کے اشعار گائے اور پڑھے جاتے ہیں اقبال کے نام پر بننے والے اداروں کے سربراہ سکرین پر آکر رٹی رٹائی تقریریں کرتے ہیں اور پھر


بپا ہم سال میں اک مجلس اقبال کرتے ہیں
پھر اْسکے بعد جو کرتے ہیں وہ قوال کرتے ہیں


اس سب کے باوجود بھی اقبال کا پیغام اپنی تاثیر نہی کھو رہا. اب ایک ہی حل ہے کہ اسے دریا برد کر دیا جاے. ورنہ یہ ہماری نیندیں حرام کرتا رہے گا
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فراز اکرم 

Death anniversary of Allama Iqbal, 
Iqbal day, poetry of Iqbal, majlis iqbal. Iqbal ka asal paigham,
iqba ki shairi,
74th death anniversary of national poet Dr Allama Muhammad Iqbal
Muffakir-e-Pakistan, Shair-e-Mashriq and Hakeem-ul-Ummat.

22 comments:

  1. aap ne jo kuch b kaha hai sub baqwas ki hai..................IQBAL ki poetry jo na samjh sky na samjhy,in ki poetry ki har Urdu ki book mein COMPULSORY kr dena chahiye,TOHEED,SADAQAT,JAZBA-E-IMAANI,HUBB-UL-WATNI k samandur ki poetry ko bann krny ki baat krty ho ap.
    sharam kro

    جواب دیںحذف کریں
  2. Mr.Faraz
    Muje lagta hai k tumhara dimagi towazan durust ni ha iska ilaaj kerwaoo. meri bat yaad rakhoo jo tum keh rehy ho wo no koi ker sakta ha or na koi ker paye ga. Or tum kya khud ko bohat zaheen samajhty ho jo tum ne aik Allmi shorat yafta shaaks ki poety ko khatam kerny ki bat kerty ho.


    apny dimagh ka illaj ker wao . khud ki Aqaal Iqbal ki batooo ko samajh ni paaa rahi or chala ha usko bura bhala kehny.



    tere jaisy insan k liye muje Iqbal ka wo sheir yad ayaa ha.

    Iqbal kehta ha ?

    K teri Nazer nahi to mere halka-e-sukhan me na Bethh.

    k Nukhta-e-haye khudi aik teez talwar hai.


    bye.

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. آپ کو اگر مضمون سمجھ نہیں آیا تو اس میں ہمارا کیا قصور ہے،ہم یہی درخواست کر سکتے ہیں کہ دوبارہ پڑھیں

      حذف کریں
    2. دوستو ! یہ طنزومزاح پر مبنی ایک عمدہ مضمون ہے اس میں سیریس نہیں ہونا چاہیئے

      حذف کریں
    3. بہت خوب. شکریہ جناب

      حذف کریں
  3. HAHAHA.. shayad isi liay faraz nay yah sab tamheed bandhi hay ooper. ap nay un sab baaton ko negative lay lia. agar ghor karan to yah alfaz iqbal sahab k kilaf nahe haan bal k yah to ham sab ko hamari asal soorat hamara asal chehra dikhaya gaya hay. iqbal k shikwa ki tarhan yah faraz ka ham sab logon say shikwa hay k iqbal ki shairi haman kya batati hay aur ham log us ka kya hashar nashar kartay rahay, faraz k alfaz ko aankh say nahe apnay dil say parhnay ki koshish karan is main ghusa aur tanqeed nahe is main islah hay // agar koi sochay to

    جواب دیںحذف کریں
  4. Capt ............. (Pak Army)17 نومبر، 2013 4:44 AM

    good work faraz... and my request to others who hav commented after just reading (not studying)... plz try to comprehend whats written...

    جواب دیںحذف کریں
  5. Bohat hi zbardast likha hy ap ne.. Khuda kare k Bhereay numa Hukamran ham ko aese nai chorenge jab tak hamare andar Iqbal k Shaheen wala josh aur walwla nai hoga..

    جواب دیںحذف کریں
  6. آپ نے بالکل درست فرمایا ہے۔جب تک ہمارے اندر علامہ اقبال کا شاہین نہیں بنیں گے تب تک یہ بھڑئے نما حکمران ہم کو توڑ مروڑ کر کھاتے رہینگے۔ہمیں ہمارے اندر ایک جزبہ ، جوش اور ولولہ پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔

    جواب دیںحذف کریں
  7. بھائی جان،کالم لکھنے والے(فراز اکرم) کا کوئی قصور نہیں وہ بچارہ تو ہم سب کو بیدار کر رہا ہے کہ ہم نے اس مجددِدین وملت،قلندر درویشں کی تعلمیات کوصرف سالانہ مجالس ،کسی اقبال کانفرس ،کسی سیاسی جلسے یا اپنی بات کو واضح کرنے کے لیے حضرت اقبال رحمتہ اللہ علیہ کا استعمال کرتے ہیں۔ ہماری فلسفہ خودی کے امام کے ساتھی واجبی محبت کی وجہ سے کالم نگار نے ہمارے معاشرے کا حضرت علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ کے ساتھ رویے کا زوایہ کھنیچا ہے۔ برائے مہربانی پہلے بات کو تولو پھر بولو۔ فراز اکرم آپ کی اچھی کوشش ہے جونواں کی حضرت علامہ محمد اقبال رحمتہ اللہ علیہ کی باقاعدہ تعلمیات کی ضرورت ہے ہم نے ایک ادارہ قائم کیا تعمیرِخودی کے نام سےجو حضرت صاحب کی اصل پغیام فلسفہ خودی کو اجاگر کرنے کے لیے بنیا گیا ہے۔ آپ سب کو اس کی دعوت دی جاتی ہے۔ ویب سائٹ کا نام ہے۔رابطہ فرمائیں
    www.tameer-e-khudi.com
    info@tameer-e-khudi.com

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. بہت شکریہ شہباز صاحب۔۔۔
      تعمیر خودی کی ویب سائٹ نہیں کھل رہی۔

      حذف کریں
  8. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  9. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  10. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  11. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  12. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  13. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  14. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  15. جناب فرازاکرم صاحب،
    please try again e.g
    http://tamerekhudi.com
    lahoti@tameerekhudi.com
    please also read this article e.g
    http://tameerekhudi.com/?page_id=860
    if any query then please feel free to contact at just msg i will call back for any discussion
    341-7869304

    جواب دیںحذف کریں
  16. tum mujhe pagal lagte ho.....asy kalam lihne say phle apne oqat bhe dekh lia karo kay tum kya ho....iqbal say muqabla kar rahe ho

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. بہت خوب فراز صاحب!

      بہت شکریہ ایسے عمدہ کام کے لیے۔
      ویسے سچی بات ہے کہ عنوان دیکھ کر مجھے بھی پہلے غصہ آگیا تھا۔۔ ہاہاہاہاہا۔ عنوان ہی ایسا تھا۔

      لیکن جب مکمل مضمون پڑھا تو داد دیئے بغیر نہیں رہ سکا۔

      جتنے دوستوں نے بھی جلدی میں تبصرے دیئے ہیں تو ان سے گذارش ہے کہ پلیز ایک بار مضمون کو مکمل پڑھ لیں ٹھنڈے دماغ کے ساتھ اور پھر تبصرہ کریں۔

      شکریہ۔

      حذف کریں